وکلا: احتجاج: متنازعہ جج کی ’چھٹی‘

فائل فوٹو
Image caption اس معاملے پر وکلا نے پُر زور احتجاج کیا تھا (فائل فوٹو)

پنجاب میں وکلاء اور ماتحت عدلیہ کے درمیان کشیدگی کے بعد صوبائی دارالحکومت لاہور کے ڈسٹرکٹ وسیشن جج کو تبدیل کردیا گیا ہے اور ان کی جگہ چیف جسٹس ہائی کورٹ نے ضلعی عدالتوں کے نئے سربراہ کا تقرر کردیا ہے۔

ڈسٹرکٹ وسیشن جج زوار احمد شیخ رخصت پر چلے گئے ہیں اور اب ان کی جگہ سہیل ناصر نئے ڈسٹرکٹ وسیشن لاہور ہونگے۔

ڈسٹرکٹ وسشین جج زوار احمد شیخ نے وکلا: اور ججوں کے تنازعے کے بعد چار ماہ کی چھٹی کی درخواست دی تھی جسے لاہور ہائی کورٹ نے منظور کرلیا ہے۔

ضلع کی عدالتوں کے ججوں نے اس فیصلے کو تسلیم کرتے ہوئے دوبارہ عدالتی کام شروع ہونے کا اعلان کیا ہے۔ تاہم وکلاء تنظیموں کی طرف سے نئی پیش رفت پر کوئی رد عمل سامنے نہیں آیا۔

لاہور کی ضلعی بارایسوسی ایشن نے اس سال جولائی میں ایک قرار داد کے ذریعے ڈسٹرکٹ وسیشن جج کے مبینہ ’نامناسب رویہ‘ کو جواز بنا کر زوار احمد شیح کو تبدیل کرنے کا مطالبہ کیا تھا اور مطالبہ پورا نہ ہونے پر گزشتہ ہفتے وکلاء کے احتجاج میں شدت آگئی۔ سیشن جج کی تبدیلی کے احتجاج کے دوران وکیلوں نے چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کے کمرہ عدالت پر حملہ بھی کیا تھا۔

وکیلوں کے احتجاج کے ردعملمیں پنجاب کی ماتحت عدلیہ کے ججوں نے اپنا کام چھوڑ دیا تھا اور اپنے استعفے متعلقہ حکام کو دیے تھے۔ تاہم چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ جسٹس خواجہ شریف نے ان استعفوں کو مسترد کرتے ہوئے ماتحت عدلیہ کے ججوں کو فرائض سرانجام دینے کے ہدایت کی تھی۔

نامہ نگار عبادالحق کا کہنا ہے کہ لاہور ہائی کورٹ کی طرف سے جاری ہونے والے نوٹیفیکیشن کے مطابق ڈسٹرکٹ وسیشن جج اٹک سہیل ناصر کو تبدیل کرکے انہیں ڈسٹرکٹ وسیشن جج لاہور مقرر کیا گیا ہے جبکہ سہیل ناصر کی جگہ بینکنگ کورٹ لاہور کے جج خلیق الزمان کو اٹک کا ڈسٹرکٹ وسیشن جج تعینات کیا گیا ہے۔

دوسری جانب ماتحت عدلیہ کے ججوں کے ایک وفد نے چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سے منگل کی صبح ملاقات کی جس کے بعد جوڈیشل افسروں نے اپنا عدالتی کام دوبارہ سے شروع کرنے کا اعلان کیا۔ملاقات میں رجسٹرار ہائی کورٹ عبدالستار اصغر اور ممبر انسپکشن کمیٹی اشتیاق احمد بھی موجود تھے۔

ماتحت عدلیہ کے ججوں کا کہنا ہے کہ وہ چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ خواجہ محمد شریف کی ہدایت پر اپنے عدالتی فرائص سرانجام دیں گے۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس افتخار محمد چودھری نے بھی وکلاء اور ماتحت عدلیہ کے ججوں میں مفاہمت کے لیے ایک تین رکنی کمیٹی بنائی تھی تاہم وکلا تنظیموں نے کمیٹی کو مسترد کردیا تھا۔

زوار احمد شیخ کو اس سال جنوری میں لاہور کا ڈسٹرکٹ وسیشن جج مقرر کیا گیا تھا اور وہ اس سے پہلے انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت کے جج اور ایڈیشنل سیشن جج کے طور پر لاہور میں فرائض انجام دے چکے ہیں۔

اسی بارے میں