وزیرستان:ایک اور ڈرون حملہ، پانچ ہلاک

Image caption رواں ماہ شمالی وزیرستان میں پونے والا یہ پانچواں ڈرون حملہ تھا

پاکستان کے قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں حکام کے مطابق امریکی جاسوس طیارے کے ایک حملے میں پانچ افراد ہلاک اور تین زخمی ہو گئے ہیں۔

شمالی وزیرستان میں مقامی انتظامیہ کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ اتوار کی صبح گیارہ بجے تحصیل سپن وام کے علاقے شوہ میں ایک مکان اور اس کے قریب کھڑی گاڑی کو امریکی جاسوس طیارے سے نشانہ بنایا گیا۔

پاکستان:امریکی ڈرون حملوں میں تین گناہ اضافہ: خصوصی ضمیمہ

ڈرون حملوں کا تعلق یورپ منصوبے سے

ڈرون حملوں میں تیزی کیوں؟ آڈیو رپورٹ

انھوں نے بتایا کہ جاسوس طیارے نے تین میزائل داغے جس کے نتیجے میں گاڑی مکمل طور پر تباہ ہوگئی اور اس میں سوار پانچ افراد ہلاک اور تین زخمی ہوگئے۔

سرکاری اہلکار کے مطابق میزائل حملے کے نتیجے میں مکان کا ایک حصہ مکمل طور پر تباہ ہو گیا ہے۔ انھوں نے بتایا کہ اس مکان کو مقامی طالبان کمانڈر حافظ گل بہادر گروپ کے شدت پسند ٹھکانے کے طور پر استعمال کرتے تھے۔

مقامی لوگوں نے بی بی سی کے نامہ نگار دلاور خان وزیر کو بتایا کہ دوسرے میزائل حملے کے خدشے کے پیشِ نظر بہت کم لوگ تباہ ہونے والے مکان کی طرف گئے ہیں۔ انھوں نے بتایا کہ ہلاک اور زخمی ہونے والوں کو ایک دوسرے مکان میں منتقل کر دیا گیا ہے۔

مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ حملے کے نتیجے میں ہلاک ہونے والے افراد کی لاشیں بری طرح جھلس جانے کی وجہ سے ناقابل شناخت ہو چکی ہیں جبکہ حکام کے مطابق ہلاک ہونے والے افراد غیر ملکی ہیں تاہم یہ واضح نہیں کہ ان میں کوئی اہم شخصیت شامل ہے کہ نہیں۔

خیال رہے کہ رواں ماہ کی پانچ تاریخ کو شمالی وزیرستان کی تحصیل میرعلی میں ایک ڈرون حملے میں تین عرب اور چار عرب نژاد جرمن شہریوں سمیت آٹھ افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

اس سے چند روز پہلے یورپی اور امریکی انٹیلیجنس اداروں نے القاعدہ کی جانب سے یورپ میں ممبئی طرز کے حملوں کی پاکستان کے قبائلی علاقوں میں منصوبہ بندی کا پتہ چلایا گیا تھا۔ اور پاکستانی حکام اور امریکی اہلکار حالیہ دنوں میں ڈرون حملوں میں اضافے کو القاعدہ کی جانب سے یورپی شہروں میں حملوں کی مبینہ منصوبہ بندی سے جوڑتے ہیں۔

واضح رہے کہ شمالی وزیرستان کے اس علاقے میں ہونے والا یہ دوسرا ڈرون حملہ تھا۔ شمالی وزیرستان سمیت پاکستان کے قبائلی علاقوں میں گزشتہ ماہ ستمبر میں پچیس ڈرون حملے ہوئے تھے جو گزشتہ چھ سال کے دوران کسی ایک ماہ میں سب سے زیادہ تھے جبکہ رواں ماہ شمالی وزیرستان میں اب تک پانچ حملے ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں