فلاحِ انسانیت دہشتگرد تنظیموں کی فہرست میں شامل

فائل فوٹو
Image caption امریکی حکام کا دعویٰ ہے کہ لشکرِ طیبہ نے فلاحِ انسانیت فاؤنڈیشن کی آڑ لینے کی کوشش کی ہے

امریکہ نے پاکستان کے خیراتی ادارے فلاحِ انسانیت فاؤنڈیشن کو دہشت گرد تنظیموں کو فہرست میں شامل کر دیا ہے۔

امریکی دفترِ خارجہ کی طرف سے جاری کیئے گئے ایک بیان کے مطابق فلاحِ انسانیت فاؤنڈیشن، کالعدم لشکرِ طیبہ کی شاخ ہے اس لیے اس کے بارے میں یہ فیصلہ کیا گیا۔

امریکی دفترِ خارجہ نے فلاحِ انسانیت فاؤنڈیشن کے تین اراکین حافظ عبدالرؤف، میاں عبداللہ اور محمد نوشاد کو بھی دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کیا ہے۔

امریکی دفتر خارجہ کے حکام کے مطابق فلاح انسانیت فاؤنڈیشن پر پابندی اس امریکی عزم کی عکاس ہے کہ لشکر طیبہ کے لیے کسی قسم کی حمایت یا مدد کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔

حکام کا دعویٰ ہے کہ لشکر طیبہ نے اس فاؤنڈیشن کی آڑ لینے کی کوشش کی تھی جسے ناکام بنا دیا گیا ہے۔

فلاح انسانیت فاؤنڈیشن لشکر طیبہ کے ساتھ کسی قسم کے تنظیمی تعلق سے انکار کرتی ہے۔

اسی ماہ کے آغاز میں امریکہ نے پاکستان کی دو کالعدم جہادی تنظیموں لشکر طیبہ، جیش محمد اور اس کی ذیلی تنظیم الرحمت ٹرسٹ کے خلاف نئی مالی پابندیوں کا اعلان بھی کیا تھا۔

امریکی محکمہ خزانہ کے اعلامیے کے مطابق ان پابندیوں کا مقصد دونوں شدت پسند تنظیموں کے مالی اور امدادی نیٹ ورکس کو نشانہ بنانا ہے۔

اعلامیے میں کہا گیا تھا کہ ان پابندیوں کا اطلاق کالعدم لشکر طیبہ کے ایک مبینہ کمانڈر اعظم چیمہ، تنظیم کے اہم رہنما حافظ عبدالرحمنٰ مکی، کالعدم جیش محمد کے سربراہ محمد مسعود اظہر کے علاوہ جیش محمد کی ذیلی تنظیم الرحمت ٹرسٹ پر ہوگا۔

اعلامیے کے مطابق الرحمت ٹرسٹ جیش محمد کا آپریشنل فرنٹ ہے جو جیش محمد اور تنظیم کے سربراہ محمد مسعود اظہر کو مدد فراہم کرتا ہے۔

واضح رہے کہ امریکہ کی جانب سے نئی مالی پابندیوں کا اعلان صدر براک اوباما کے دورہ بھارت سے دو روز پہلے کیا گیا تھا۔

اسی بارے میں