ہنگو: جھڑپ کے بعد اساتذہ بازیاب

فائل فوٹو، سکیورٹی فورسز
Image caption تمام اساتذہ کو بازیاب کروا لیا گیا ہے اور تمام اساتذہ خیریت سے ہیں

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے ضلع ہنگو میں اساتذہ کو بازیاب کرانے کی کارروائی کے دوران پولیس کا ایک اہلکار ہلاک اور ایک زخمی ہو گیا ہے۔

ہنگو میں پولیس اہلکار واجد علی شاہ کے مطابق بدھ کو نامعلوم شدت پسندوں نے ہنگو کے مضافاتی علاقے دربند کے مقام پر ایک سرکاری سکول کے سات اساتذہ کو ڈیوٹی پر جاتے ہوئے راستے سے اغوا کر لیا۔

انہوں نے کہا کہ اساتذہ کے اغواء کی اطلاع ملتے ہی علاقے میں موجود قومی لشکر اور پولیس اہلکار جائے وقوعہ پر پہنچ گئے۔

انہوں نے بتایا کہ پولیس اور شدت پسندوں کے درمیان شدید جھڑپ میں ایک پولیس اہلکار منظور خان ہلاک جبکہ ایک زخمی ہوگیا ہے۔

اہلکار کے مطابق پولیس اور قومی لشکر کے ساتھ مقابلے کے بعد شدت پسند فرار ہوگئے ہیں اور تمام اساتذہ کو بازیاب کرا لیاگیا ہے اور تمام خیریت سے ہیں۔

پولیس اہلکار نے نامہ نگار دلاور خان وزیر کو مزید بتایا کہ اس واقعے کے بعد سکیورٹی فورسز نے قریبی علاقے میں شدت پسندوں کے خلاف سرچ آپریشن شروع کیا ہے۔لیکن ابھی تک کسی شدت پسند کے ہلاک یا گرفتار ہونے کی اطلاع نہیں ملی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ دربند سکاؤٹس قلعہ سے شدت پسندوں کے مورچوں پر گولہ باری بھی کی جا رہی ہے۔جس شدت پسندوں کا ایک اہم مورچہ تباہ ہوگیا ہے۔

یاد رہے کہ ہنگو کا علاقہ دربند قبائلی علاقے اورکزئی ایجنسی کے سنگم پر واقعہ ہے جہاں پہلے بھی نہ صرف اساتذہ کو اغواء کیا ہے بلکہ اس علاقے سے کئی بار سکول کے طلباء کو بھی اغواء کیا جا چکا ہے۔ ان میں سے بعض طلباء کو تین مہینے کے بعد رہائی ملی ہے۔

اسی بارے میں