مشتبہ طالبان کی گرفتاری کا دعویٰ

Image caption کراچی میں اس پہلے بھی مشتبہ طالبان کو گرفتار کرنے کے دعویٰ کیا گیا ہے(فائل فوٹو)

کراچی میں سی آئی ڈی پولیس نے سہراب گوٹھ کے علاقے سے رحمان نامی ایک مشتبہ طالبان کوگرفتار کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

ایس پی، سی آئی ڈی فیاض خان کا کہنا ہے کہ ملزم کے چھ ساتھی فرار ہوگئے ہیں، جبکہ پولیس نے دس کلوگرام دھماکہ خیز مادہ، دستی بم اور کلاشنکوف برآمد کی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ملزمان عاشورہ کے دن تخریب کاری کا ارادہ رکھتے تھے، فرار ہونے والے ملزمان میں دو خودکش بمبار بھی شامل ہیں، جن کی گرفتاری کی کوشش کی جا رہی ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ملزمان کا نیٹ ورک اورکزئی ایجنسی سے کنٹرول ہوتا ہے، جس کا سربراہ مقامی امیر حافظ سعید ہے۔

ایس پی فیاض خان کا کہنا ہے کہ ملزم رحمان لانڈھی کی شیرپاؤ کالونی کا رہائشی ہے مگر اس کی گرفتاری سہراب گوٹھ سے ہوئی ہے، اکثرگرفتاریاں سہراب گوٹھ سے ہونے کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ اس علاقے میں ملزمان آسانی سے چھپ جاتے ہیں اور یہاں پولیس اور ایجنسیوں کو کام کرنے میں بھی دشواری ہوتی ہے۔

’اندرون ملک سے آنے والے لوگوں کو وہاں سستے ہوٹل اور مکان دستیاب ہو جاتے ہیں، جبکہ ایک ہی کمیونٹی ہے دوسری جگہوں کے مقابلے میں یہاں وہ آسانی محسوس کرتے ہیں‘۔

فیاض خان کا کہنا تھا کہ ان ملزمان کا سی آئی ڈی سینٹر پر حملے سے براہ راست کوئی تعلق نہیں ہے مگر ان سے ملنے والی معلومات فائدہ مند ثابت ہوگی۔

یاد رہے کہ کراچی میں ملزمان نے سی آئی ڈی سینٹر پر بارود سے بھری ایک گاڑی ٹکرا دی تھی، جس میں بارہ افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

اسی بارے میں