خیبر ایجنسی: ڈرون حملہ میں چھ ہلاک

پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں حکام کا کہنا ہے کہ امریکی ڈرون حملے میں کم سے کم چھ مشتبہ شدت پسند ہلاک اور ایک زخمی ہوا ہے۔

پولیٹکل انتظامیہ کے ایک اہلکار نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے تصدیق کی کہ جمعرات کی شام خیبر ایجنسی کی وادی تیراہ کے دُور افتادہ علاقے سپین درنگ میں امریکی جاسوس طیارے سے مشتبہ شدت پسندوں کی ایک گاڑی پر میزائل داغے گئے۔

انہوں نے کہا کہ اس حملے میں کم سے کم سات مشتبہ جنگجو ہلاک جبکہ ایک زخمی ہوا۔ حملے گاڑی بھی مکمل طورپر تباہ ہوگئی ہے۔

مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والے افراد کا تعلق حافظ گل بہادر اور سوات طالبان سے بتایا جاتا ہے تاہم سرکاری طور پر اس کی تصدیق نہیں ہوسکی۔

خیبر ایجنسی میں اس سے پہلے بھی ایک ڈرون حملہ ہوا تھا۔ تاہم آجکل زیادہ تر بغیر پائلٹ کے امریکی طیاروں کے حملے شمالی اور جنوبی وزیرستان میں ہو رہے ہیں جن میں کئی اہم ملکی اور غیر ملکی جنگجو بھی مارے جاچکے ہیں۔

یہ بھی اطلاعات ہیں کہ ان حملوں کے نتیجے میں اکثر شدت پسند اب وزیرستان سے دیگر قبائلی ایجنسیوں کی جانب فرار ہو رہے ہیں۔