’تیس ارب ڈالر کے معاہدے کیے جائیں گے‘

Image caption چین کے وزیراعظم وین جیا باؤ جمعہ کی دوپہر کو پاکستان کے تین روزہ دورے پر اسلام آباد پہنچے ہیں

پاکستان کے وفاقی وزیر اطلاعات قمر زمان کائرہ نے کہا ہے کہ چین کے وزیر اعظم وین جیا باؤ کے تین روزہ دورے کے دوران دونوں ممالک کے درمیان لگ بھگ تیس ارب ڈالر کے معاہدوں پر دستخط کیے جانے کی امید ہے۔

اس سے پہلے چین کے وزیر اعظم وین جیا باؤ اور ان کے پاکستانی ہم منصب سید یوسف رضا گیلانی کے درمیان اسلام آباد میں ایوان وزیر اعظم میں بات چیت ہوئی۔

جمعہ کو وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات قمر زمان کائرہ نے اس ملاقات کے بعد نیوز کانفرنس میں بتایا کہ دونوں رہنماؤں نے اپنی ملاقات میں ایک دوسرے کے ساتھ تعلقات کو مزید بہتر بنانے اور دوستی کو مستحکم کرنے اور باہمی تعاون کے مزید مواقع پیدا کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

انھوں نے کہا کہ دونوں ممالک نے توانائی، مواصلات، سیلاب سے متاثرہ علاقوں کی تعمیر نو، زراعت اور ثقافت اور دیگر شعبوں کے فروغ کے لیے تیرہ معاہدوں اور مفاہمت کی یادداشتوں پر بھی دستخط کیے ہیں۔

چین اور پاکستان کے وزرائے اعظم نے معاہدوں اور مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط کی تقریب میں موجود رہے۔

وفاقی وزیر اطلاعات قمر زمان کائرہ نے لگ بھگ تیس ارب ڈالر کے معاہدوں کی تفصیل بتاتے ہوئے کہا کہ پاکستان اور چین کے مشترکہ اقتصادی گروپ نے پاکستان میں تین درجن منصوبوں کی نشاندہی کی ہے جن میں چین تعاون کرے گا اور ان منصوبوں پر چودہ ارب ڈالر کی سرمایہ کاری ہونے کا امکان ہے۔

نامہ نگار ذوالفقار علی کا کہنا ہے کہ اس نیوز کانفرنس میں موجود چین میں پاکستان کے سفیر مسعود خان نے کہا کہ یہ منصوبے سال دو ہزار بارہ سے دو ہزار سولہ تک پانچ سالوں میں مکمل ہوجائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ دوسرے شعبوں میں پانچ ارب ڈالر کی معاہدوں پر بھی دستخط ہوں گے۔

وزیر اطلاعات نے اس امید کا اظہار کیا کہ اتوار کو دونوں ممالک کے تاجروں اور سرمایہ کاروں کی کانفرنس میں دس ارب ڈالر کے معاہدے ہونے کا امکان ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ چینی وزیر اعظم کے ہمراہ ڈھائی سو تاجر اور کاروباری شخصیات بھی ہیں۔

توانائی کے شعبے میں تعاون کا ذکر کرتے ہوئے قمر زمان کائرہ نے کہا کہ چین نے توانائی کے تمام شعبوں میں تعاون کا وعدہ کیا ہے۔

وزیر اطلاعات قمر زمان کائرہ نے کہا کہ چین سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں سڑکوں کی مرمت، ان کی دوبارہ تعمیر اور زراعت کے شعبے میں لگ بھگ تئیس کروڑ ڈالر کی امداد فراہم کرے گا جبکہ گھروں کی تعمیر کے لیے ایک کروڑ ڈالر کی امداد دے گا۔

اس کے علاوہ وزیر اطلاعات نے کہا کہ چین سیلاب سے متاثرہ علاقوں کی تعمیر نو کے لیے چالیس کروڑ ڈالر کا رعایتی قرض فراہم کرے گا۔

چین کراچی اور اسلام آباد میں انڈسٹریل اینڈ کمرشل بنک کی دو شاخیں بھی کھولے گا۔

پاکستان کے سرکاری خبر رساں ادارے اے پی پی کے مطابق پاکستان اور چین نے سٹریٹیجک شراکت داری کو مزید مضبوط بنانے کے عزم کا اعادہ کرتے ہوئے دفاع، توانائی، زراعت، ٹیکنالوجی، مواصلات، تجارت، معیشت اور عوامی سطح پر روابط کو وسعت دینے کے لیے تیرہ معاہدوں اور مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط کیے ہیں۔

اے پی پی کے مطابق ان معاہدوں اور مفاہمت کی یادداشتوں کے تحت چین پاکستان میں مختلف شعبہ جات میں تیس ارب ڈالر تک کی سرمایہ کاری کرے گا۔

اس سے پہلے چین کے وزیراعظم وین جیا باؤ بھارت کے تین روزہ دورے کے بعد جمعہ کی دوپہر کو پاکستان کے تین روزہ دورے پر اسلام آباد پہنچے ہیں۔

راولپنڈی میں فوجی ہوائی اڈے چکلالہ ائر بیس پر چینی وزیراعظم کا شاندار استقبال کیا گیا۔

پاکستان کے وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی، کابینہ کے اراکین اور تینوں مسلح افواج کے سربراہوں نے چینی وزیر اعظم کا استقبال کیا۔

ہوائی اڈے پر چینی وزیر اعظم کو اکیس توپوں کی سلامی دی گئی۔

اسی بارے میں