آخری وقت اشاعت:  منگل 11 جنوری 2011 ,‭ 09:17 GMT 14:17 PST

’قاتل کے حامی توہینِ رسالت کے مرتکب‘

اس مواد کو دیکھنے/سننے کے لیے جاوا سکرپٹ آن اور تازہ ترین فلیش پلیئر نصب ہونا چاہئیے

ونڈوز میڈیا یا ریئل پلیئر میں دیکھیں/سنیں

حکمران جماعت پیپلز پارٹی کے چیئرپرسن بلاول زرداری کا کہنا ہے کہ گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے قاتل کی حمایت کرنے والے لوگ ’اصل میں توہینِ رسالت کرنے والے ہیں‘۔

گورنر پنجاب سلمان تاثیر کو چار جنوری کو اسلام آباد میں ان کے محافظ نے گولیاں مار کر قتل کر دیا تھا اور قاتل کے مطابق اس نے یہ قدم گورنر پنجاب کی جانب سے ناموسِ رسالت کے قانون کو کالا قانون کہنے پر اٹھایا۔

پیر کی شام لندن میں پاکستانی ہائی کمیشن میں سلمان تاثیر کی یاد میں منعقدہ ایک تعزیتی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ ’جو لوگ میرے مذہب کو نشانہ بناتے ہیں، خصوصاً وہ جو اس کے پرامن پیغام کو خراب کرتے ہیں، تمہی وہ لوگ ہو جو پوشیدہ رہ کر توہینِ رسالت کے مرتکب ہو رہے ہو اور تمہیں شکست ہوگی‘۔

جو لوگ میرے مذہب کو نشانہ بناتے ہیں، خصوصاً وہ جو اس کے پرامن پیغام کو خراب کرتے ہیں، تمہی وہ لوگ ہو جو پوشیدہ رہ کر توہینِ رسالت کے مرتکب ہو رہے ہو اور تمہیں شکست ہوگی۔

بلاول بھٹو

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق بلاول زرداری نے کہا کہ ’یہی ہمارا جہاد ہوگا‘۔انہوں نے عیسائیوں سمیت پاکستان میں بسنے والی اقلیتوں کو یقین دلایا کہ ان کا تحفظ کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ‘ہم آپ کا تحفظ کریں گے۔ اور وہ لوگ جو آپ کو ناکردہ جرائم کی سزا دینا چاہتے ہیں انہیں مجھ سے ہو کر آپ تک پہنچنا ہوگا‘۔

دریں اثناء کیتھولک عیسائیوں کے سب سے اہم مذہبی پیشوا پوپ بینیڈکٹ کی جانب سے پاکستان میں ناموسِ رسالت کے قانون کے خاتمے کے مطالبے پر پاکستان میں مذہبی جماعتوں نے شدید ردعمل ظاہر کیا ہے۔

جماعتِ اسلامی کے رہنما لیاقت بلوچ کا کہنا ہے کہ یہ ’پاکستان کے داخلی اور مذہبی معاملات میں کھلی مداخلت ہے‘۔ اے پی پی کے مطابق ان کا کہنا تھا کہ ’پوپ کا بیان تہذیبوں کے ٹکراؤ کی عام دعوت اور دنیا کو خونریز جنگ کی جانب دھکیلنے کے برابر ہے۔

پوپ نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ اس قانون کے تحت پاکستان میں اقلیتوں کو انصاف نہیں ملتا اور وہ تشدد کا شکار ہوتی ہیں۔ انہوں نے رواں سال کے شروع میں پنجاب کے گورنر سلمان تاثیر کے قتل کا ذکر کیا جو ناموسِ رسالت قانون کے مخالف تھے۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ یہ بہت کم ہوتا ہے کہ پوپ بینیڈکٹ اپنے خطاب میں کسی خاص ملک کا ذکر کریں۔

[an error occurred while processing this directive]

BBC navigation

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔