کراچی میں رینجرز کا آپریشن

کراچی میں تشدد کےحالیہ واقعات کے نتیجے میں ہونے والے آپریشن کے فیصلے کے بعد منگل کی صبح رینجرز نے اورنگی ٹاؤن کے علاقے میں سرچ آپریشن کیا ہے۔

اورنگی کے ٹاؤن پولیس آفیسر خرم وارث نے بی بی سی کو بتایا کہ جرائم پیشہ افراد کے خلاف یہ سرچ آپریشن بنیادی طور پر رینجرز نے کیا ہے کیونکہ ان کے پاس شاید کوئی مخصوص اطلاع تھی۔

سرچ آُپریشن کی تفصیل بتاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ رینجرز علاقے میں پہلے سے موجود تھے لیکن عملی طور پر آپریشن صبح ساڑھے آٹھ بجے شروع ہوا جو تقریباً بارہ بجے ختم ہوا۔

نامہ نگار حسن کاظمی کے مطابق پولیس کی مدد کے بارے میں انہوں کہا کہ سرچ آپریشن کے دوران پولیس اور رینجرز نے ایک دوسرے سے مکمل تعاون کیا اور پولیس نے ایک بیرونی دائرہ بنا کر رینجرز کی مدد کی۔

انہوں نے بتایا کہ آپریشن کےدوران کئی مشتبہ افراد کو حراست میں لیا گیا ہے جنہیں شناخت کے مرحلے سے گزارا جا رہا ہے۔ جس کے بعد ان میں سے جو بے قصور ہوں گے انہیں چھوڑ دیا جائےگا۔

خرم وارث نے بتایا کہ گرفتار افراد کی تعداد کے بارے میں حتمی طور پر بتانا ممکن نہیں ہے تاہم ان کی تعداد سو سے زیادہ ہے۔ انہوں نے بتایا کہ فی الحال گرفتار افراد رینجرز کی تحویل میں ہیں اور وہی ان کی شناخت کے عمل کی نگرانی کر رہے ہیں۔

رینجرز کی جانب سے اس سرچ آپریشن کے انچارج ونگ کمانڈر کرنل کامران نے بی بی سی کو اس بارے میں کچھ بھی بتانے سے یہ کہہ کر انکار کردیا کہ انہیں میڈیا سے بات کرنے کی بالکل اجازت نہیں ہے۔

اسی بارے میں