نوشہرہ: چھاؤنی کےعلاقے میں دھماکہ، 10 ہلاک

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption نوشہرہ میں اس سے پہلے بھی کئی مرتبہ پولیس اور فوج پر حملے کیے جاتے رہے ہیں۔

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے ضلع نوشہرہ میں فوجی چھاونی کے علاقے میں ہونے والے ایک بم دھماکے میں حکام کے مطابق سکیورٹی اہلکاروں سمیت کم سے کم دس افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں۔

نوشہرہ کے ضلعی پولیس سربراہ محمد حسین نے پشاور میں بی بی سی کے نامہ نگار رفعت اللہ اورکزئی کو بتایا کہ یہ واقعہ جمعرات کی شام نوشہرہ شہر سے چند کلومیٹر دور مردان روڈ پر رسالپور بازار میں پیش آیا۔

نوشہرہ دھماکہ: ہلاکتیں 18، تحقیقات جاری

انہوں نے کہا کہ دھماکہ سائیکل میں نصب کئے گئے ایک ریموٹ کنٹرول بم سے کیا گیا ہے جس میں اب تک کم سے کم دس افراد کی ہلاکت کی تصدیق ہوئی ہے جبکہ متعدد افراد زخمی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تقریباً دس سے بارہ کلو بارودی مواد سائیکل میں نصب کیا گیا تھا جس پر بچوں کے کھلونے بھی رکھے گئے تھے۔ بعض مقامی ذرائع کے مطابق ہلاک ہونے والوں میں دو سکیورٹی اہلکار بھی شامل ہیں۔

نوشہرہ کے ایک مقامی صحافی سہیل کاکاخیل نے بتایا کہ دھماکہ رسالپور بازار میں کنٹونمنٹ پلازہ میں ایک مشہور مقامی ہوٹل کے سامنے ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ افطاری کے بعد لوگ ہوٹل میں کھانے کھا رہے تھے کہ اس دوران دھماکہ ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ ابھی تک یہ واضح نہیں کہ دھماکے کا نشانہ کون تھے تاہم اس ہوٹل میں اکثر اوقات فوج اور ائیر فورس کے ملازمین کھانا کھانے آیا کرتے تھے۔

زخمیوں کو سی ایم ایچ ، نوشہرہ اور مردان کے ہسپتالوں میں منتقل کیا گیا ہے جن میں سکیورٹی اہلکار بھی شامل ہیں۔

عینی شاہدین کا کہنا کہ دھماکے سے ہوٹل اور اردگرد کے عمارتوں کے علاوہ چند گاڑیوں کو بھی شدید نقصان پہنچا ہے۔

خیال رہے کہ رسالپور نوشہرہ شہر کا ایک حساس علاقہ سمجھا جاتا ہے۔ یہاں ائرفورس کی ایک اکیڈمی بھی واقع ہے جبکہ انجنیرنگ ڈیپارٹمنیٹ کے اہم دفاتر بھی قائم ہیں۔

اسی بارے میں