باجوڑ: دھماکے میں چار افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption باجوڑ کے سرحدی علاقوں میں شدت پسندوں کی کارروائیوں میں اضافہ ہوا ہے

پاکستان کے قبائلی علاقے با جوڑ ایجنسی میں پاک افغان سرحد کے دورافتادہ علاقے میں راستے میں نصب بم پھٹنے سے کم از کم چار افراد ہلاک اور چار زخمی ہوگئے ہیں۔

ہلاک ہونے والوں میں دو خواتین بھی شامل ہیں۔

باجوڑ ایجنسی کے ایک اعلیٰ سرکاری اہلکار نے بی بی سی اردو کے نامہ نگار رفعت اللہ اورکزئی کو بتایا کہ یہ واقعہ جمعرات کی صبح پاکستان اور افغانستان کے ایک سرحدی گاؤں چمرقند کے مقام پر پیش آیا۔

انہوں نے کہا کہ ابتدائی اطلاعات کے مطابق سڑک کنارے دھماکہ خیز مواد نصب کیا گیا تھا اور جب یہ گاڑی وہاں سے گزری تو ایک دھماکہ ہوا۔

انہوں نے کہا کہ اب تک چار افراد کے ہلاک ہونے کی تصدیق ہو چکی ہے جبکہ چار افراد زخمی ہیں۔ سرکاری اہلکار کا کہنا تھا کہ ہلاک ہونے والوں میں تمام افراد عام شہری ہیں جن میں دو خواتین بھی شامل ہیں۔

خیال رہے کہ حال ہی میں باجوڑ کے سرحدی علاقوں میں شدت پسندوں کی کارروائیوں میں اضافہ ہوا ہے۔ اس سے پہلے بھی افغانستان کی سرحد سے شدت پسندوں کی جانب سے حکومتی حامی لشکروں کے افراد اور عمائدین پر کئی حملے ہو چکے ہیں۔

اس کے علاوہ عیدالفطر کے روز باجوڑ ایجنسی سے بیس کے قریب طلباء کو اغواء کیا گیا تھا جو تاحال بازیاب نہیں کرائے جا سکے۔ ان تمام واقعات کی ذمہ داری باجوڑ ایجنسی میں سرگرم طالبان قبول کرتے رہے ہیں۔

اسی بارے میں