ڈیرہ بگٹی، ایف سی کیمپ میں دھماکہ

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption دھماکے میں بعض عام شہریوں کے زخمی ہونے کی اطلاع ہے

بلوچستان کے علاقے ڈیرہ بگٹی میں ہونے والے ایک دھماکے کے نتیجے میں پندرہ افراد زخمی ہوئے ہیں۔ زخمیوں میں سے دس کا تعلق فرنٹئیرکور سے ہے۔

اطلاعات ہیں کہ دھماکہ فرنٹیئرکور، ایف سی کے ایک کیمپ کے اندر ہوا ہے۔

کوئٹہ سے بی بی سی کے نامہ نگار ایوب ترین کے مطابق پیر کو بلوچستان کے ضلع ڈیرہ بگٹی میں ایف سی کے ایک کیمپ میں دھماکہ ہوا جس میں دس اہلکار زخمی ہوئے ہیں۔ انہیں فوری طور پر ایف سی ہیڈ کواٹر ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔

ہسپتال میں دو زخمیوں کی حالت تشویشناک بتائی گئی ہے۔

کوئٹہ میں ایف سی کے ترجمان کے مطابق زخمی ہونے والے تمام افراد کا تعلق فرنٹیئرکور سے ہے جو ایف سی کیمپ کے اندر مختلف واقعات میں برآمد ہونے والے اسلحے کو ایک مقام سے دوسرے مقام پر منتقل کر رہے تھے کہ اچانک ایک زور دار دھماکہ ہوا۔

Image caption دھماکے کے بعد سوئي گيس پائپ لائن سے سپلائی متاثر ہوئی ہے

اُدھر ڈیرہ بگٹی سے مقامی صحافیوں نے بی بی سی کو بتایا کہ دھماکہ اتنا زوردار تھا کہ اس سے ایف سی کیمپ کے قریب کے کئی مکانات کو بھی نقصان پہنچا ہے۔ اس کی وجہ سے پانچ عام شہری بھی زخمی ہوئے ہیں جنہیں فوری طور پر سول ہسپتال ڈیرہ بگٹی منتقل کیا گیا ہے۔

مقامی صحافیوں نے دھماکے کی شدت کے باعث کیمپ کے اندر ہلاکتوں کا بھی خدشتہ ظاہر کیا ہے لیکن سرکاری سطح پراس کی تصدیق نہیں کی گئی ہے۔

دھماکے کے بعد فرنٹیئر کور کی بھاری نفری نے متاثرہ علاقے کو گھیرے میں لے کر تحقیقات شروع کر دی ہیں۔

دوسری طرف پیرکوہ کے علاقے میں نامعلوم افراد نے سولہ انچ قطرگیس پائپ لائن کو دھماکہ خیز مواد سے تباہ کیا ہے جس کے سبب سوئی گیس پلانٹ کے تین کنوؤں سے گیس کی سپلائی معطل ہوئی ہے۔

خیال رہے کہ بلوچستان میں سابق صدر جنرل پرویز مشرف کے دورحکومت میں ہونے والے فوجی آپریشن کے دوران بلوچ سردار نواب محمد اکبرخان بگٹی کی ہلاکت کے بعد ڈیرہ بگٹی میں قومی تنصیبات پر حملے شروع ہوئے تھے جوآج تک کسی نہ کسی شکل میں جاری ہیں لیکن موجودہ حکومت ان واقعات پر تاحال قابو پانے میں ناکام رہی ہے۔

اسی بارے میں