میاں اظہر تحریک انصاف میں شامل

میاں اظہر عمران خان کے ہمراہ
Image caption میاں اظہر نے تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان اپنی رہائش گاہ پر ایک تقریب میں کیا

سابق گورنر پنجاب اور مسلم لیگ قاف کے بانی سربراہ میاں محمداظہر تحریک انصاف میں شامل ہوگئے ہیں تاہم انہیں پارٹی میں ابھی کوئی عہدہ نہیں دیا گیا۔

میاں اظہر نے تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان جماعت کے سربراہ عمران خان کی موجودگی میں کیا۔

مسلم لیگ قاف کے ناراض رہنما میاں اظہر کچھ عرصہ سے سیاست میں غیر فعال تھے اور سنہ دو ہزار آٹھ کے انتخابات کے بعد سیاست سے ایک طرح کی کنارہ کشی اختیار کررکھی تھی۔

لاہور میں میاں اظہر کی رہائش گاہ پر ہونے والی تقریب میں مسلم لیگ قاف کے سابق رکن قومی اسمبلی اور سابق نائب ضلعی ناظم لاہور امجد فاروق میر نے بھی تحریک انصاف میں دوبارہ شمولیت کا اعلان کیا۔

بی بی سی کے نامہ نگار عبادالحق کا کہنا ہے کہ تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے میاں اظہر کی تحریک انصاف میں شمولیت کو اپنی جماعت کے لیے ایک بڑی فتح قرار دیا۔ انہوں نے فاروق امجد میر کی پارٹی میں واپسی کا بھی خیرمقدم کیا۔

میاں اظہر کی رہائش گاہ پر کارکنوں سے خطاب میں تحریک انصاف کے سربراہ کا کہنا ہے کہ جلد یہ فیصلہ ہوگا کہ لاہور کس کا ہے۔

میڈیا سے بات کرتےہوئے میاں اظہر نےکہا کہ ان کی یہ کوشش ہوگی کہ وہ تحریک انصاف میں اچھے لوگوں کو لائیں۔

عمران خان نے بتایا کہ میاں اظہر کو تحریک انصاف میں ان کے سیاسی قد کے مطابق ایک بڑا عہدہ دیا جائے گا۔ ایک اورسوال کے جواب میں تحریک انصاف کے سربراہ نے کہا کہ لوٹا وہ ہوتا ہے جو اقتدار کے لیے جماعت تبدیل کرے، ضروری نہیں ہے کہ ہر جماعت تبدیل کرنے والے لوٹا ہو۔

عمران خان کے بقول بانی پاکستان قائد اعظم نے بھی جماعت تبدیل کی تھی۔

تحریک انصاف میں دوبارہ شامل ہونے والے فاروق امجد میر نے اس موقع پر کہا کہ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ نون کی پالیسیوں کی وجہ سے تحریک انصاف کی مقبولیت میں مزید اضافہ ہوا ہے۔

میاں اظہر نے اپنی عملی سیاست کا آُغاز انیس سو ستاسی میں اس وقت کیا جب وہ پنجاب کے صوبائی دارالحکومت لاہور کے لارڈ میئر منتخب ہوئے اور شہر میں تجاوزات کے خلاف آپریشن کی وجہ سے شہرت حاصل کی۔

لارڈ میئر کے عہدے کی معیاد مکمل ہونے سے قبل ہی انہوں نے نواز شریف کی خالی ہونے والی قومی اسمبلی نشست این اے پچانوے سے ضمنی انتخابات میں حصہ لیا اور رکن اسمبلی بنے۔

بعدازں انہیں انیس سو نوے میں گورنر پنجاب مقرر کیا گیا لیکن وہ عہدے کی مدت مکمل ہونے سے پہلے اس وقت کے صدر غلام اسحاق خان اور وزیر اعظم نواز شریف کے درمیان کشیدگی کی وجہ سے اپنے عہدے سےمستعفیْ ہوگئے۔

مسلم لیگ نون کے ٹکٹ پر میاں اظہر انیس سو ستانوے میں دوبارہ لاہور سے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے بانوے سے رکن قومی اسمبلی منتخب ہوئے۔

بارہ اکتوبر انیس سو ننانوے کو جنرل پرویز مشرف کے اقتدار سنبھالنے کے بعد میاں اظہر نے مسلم لیگ نون سے علیحدگی اختیار کی اور باغی رہنماؤں پر مشتمل مسلم لیگ ہم خیال کے سربراہ بنے جو بعد میں مسلم لیگ قاف کے طور پر سامنے آئی۔

سابق گورنر پنجاب نے دو ہزار دو اور دو ہزار آٹھ میں مسلم لیگ قاف کی ٹکٹ پر لاہور سے انتخاب لڑا لیکن انہیں شکست ہوگئی۔دو ہزار دو میں انہوں نے این اے 132 شیخوپورہ کا بھی الیکشن لڑا۔ دو ہزار دو کے انتخابات میں میاں اظہر کے بڑے بھائی میاں محمد اشرف نے بھی لاہور سے انتخاب میں حصہ لیا لیکن وہ بھی کامیاب نہ ہوسکے۔

اسی بارے میں