’امریکہ سے تعلقات پہلے جیسے نہیں رہیں گے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

پاکستان کے وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی نے امریکی ٹی وی چینل سی این این کو دیے گئے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ نیٹو کے پاکستانی فوج کی چیک پوسٹوں پر حملے کے واقعے کے بعد امریکہ اور پاکستان کے تعلقات پہلے جیسے نہیں رہیں گے۔

وزیراعظم گیلانی نے کہا کہ ’اس واقعے کے بعد کوئی ایسا بڑا قدم ہونا چاہیے جو ملک و قوم کو مطمئن کر سکے، اور میں نے یہ معاملہ ملکی قیادت کو بھیجا ہے جو سکیورٹی سے متعلق پارلیمانی کمیٹی کے ارکان ہیں اور وہ سوچ و بچار کے بعد انھیں تجاویز دیں گے۔‘

دریں اثناء امریکی صدر براک اوباما نے نیٹو کے حملے میں پاکستانی فوجی اہلکاروں کی ہلاکت کو افسوسناک قرار دیا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان امریکہ کے ساتھ اپنے تعلقات کا ازسر نو جائزہ لے رہے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ امریکہ کے ساتھ تعلقات باہمی احترام اور باہمی مفاد کی بنیاد پر ہی قائم رہ سکتے ہیں۔

ایک سوال کیا آیا اس وقت وہ احترام مل رہا ہے تو اس پر وزیراعظم گیلانی نے کہا کہ’نہیں اس وقت ایسا نہیں ہے، جب میں اپنے ملک کی خودمختاری کا دفاع نہیں کر سکتا تو کیسے کہیں گے کہ یہ باہمی احترام اور باہمی مفاد ہے؟‘

افغانستان کے مسئلے پر آئندہ ماہ جرمنی کے شہر بون میں ہونے والی کانفرس کے بائیکاٹ کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں وزیراعظم گیلانی نے کہا کہ’اس کو رد نہیں کیا جا سکتا، یہ بات درست ہے کہ پاکستان ہو سکتا ہے کہ اس کانفرس میں اپنا نمائندہ نہ بھیجے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

ایک سوال کہ اب سے ایک ماہ کے بعد پاکستان کے امریکہ کے ساتھ تعلقات کی کیا نوعیت ہو گی تو اس پر وزیراعظم نے کہا کہ’ کچھ بھی ممکن ہے لیکن ہمارا ارداہ تعلقات کو بہتر کرنا ہے لیکن ہم ایسا احترام، وقار اور عزت کی بنیاد پر چاہتے ہیں، اس میں ایک بات جو آپ کو بتانا چاہتا ہوں کہ ہمارے فوجیوں کی زندگی اتنی ہی قیمتی ہے جتنی کی کسی دوسرے ملک کے فوجیوں کی ہو سکتی ہے۔

وزیراعظم گیلانی نے کہا عوام کی حمایت کے بغیر کوئی بھی جنگ جیتی نہیں جا سکتی ہے اور ہمیں لوگوں کی حمایت کی ضرورت ہے لیکن اس طرح کے واقعات عوام کو اس صورتحال سے دور کر دیتے ہیں۔

ادھر وائٹ ہاؤس کے ترجمان کے مطابق امریکی صدر براک اوباما نے نیٹو کے حملے میں چوبیس پاکستانی فوجی اہلکاروں کی ہلاکت کو افسوسناک قرار دیا ہے۔

وائٹ ہاؤس کے ترجمان جئے کارنے کے مطابق صدر اوباما نے ہلاک ہونے والے فوجیوں کے اہلخانہ اور پاکستانی عوام سے ہمدردی کا اظہار کیا ہے۔

صدر اوباما نے اس ضرورت پر زور دیا کہ دونوں ممالک کے مابین تعلقات اہم رہیں گے۔

واضح رہے کہ پاکستانی فوج کے مطابق قبائلی علاقے مہمند ایجنسی میں پاک افغان سرحد کے قریب سلالہ کے علاقے میں دو پاکستانی چوکیوں پر نیٹو کے ہیلی کاپٹروں نے بلااشتعال فائرنگ میں کم سے کم چوبیس سکیورٹی اہلکار ہلاک اور تیرہ زخمی ہوگئے تھے۔

اس واقعے پر پاکستان نے شدید احتجاج کیا تھا اور افغانستان میں نیٹو، ایساف کو رسد کی سپلائی روک دی تھی جب کہ بلوچستان میں شمسی ائر بیس پنردہ دن کے اندر اندر خالی کرنے کا کہنا تھا۔

اسی بارے میں