نیٹو حملے: مختلف شہروں میں مظاہرے

نیٹو حملے کے خلاف احتجاج تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption مظاہرین نے امریکہ مخالف پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے

نیٹو اور ایساف کی جانب سے پاکسانی فوج کی چوکیوں پر حالیہ بمباری کےخلاف آج مذہبی جماعتوں نے نماز جمعہ کے بعد پاکستان کے مختلف شہروں میں مظاہرے کیے اور پاکستانی فوج کے ساتھ اظہارِ یکجہتی کیا۔

ان مظاہروں میں شرکاء کی تعداد خاصی کم تھی۔

گزشتہ ہفتے مہمند ایجنسی میں نیٹو اور ایساف کی طرف سے پاکستان کی سرحدی چوکیوں پر ہونے والی بمباری میں چوبیس پاکستانی فوجی ہلاک جبکہ ایک درجن زخمی ہوگئے تھے۔

اسلام آباد کے مرکز میں واقع آبپارہ میں ہونے والے ایک مظاہرے میں مظاہرین امریکہ مخالف نعرے لگا رہے تھے۔

اس مظاہرے کا اہتمام پاکستان کی مذہبی تنظیم جماعت الدعوۃ نے کیا تھا جس میں تنظیم کے چند سو حمامیوں نے شرکت کی اور انھوں نے جماعت کی جھنڈیاں بھی اٹھا رکھی تھیں۔

مظاہرین نے کتبے اور بینرز بھی اٹھا رکھے تھے جن پر امریکہ، نیٹو اور بھارت مخالف اور پاکستان کی فوج کے حق میں نعرے تحریر تھے۔

صوبائی دارالحکومت پشاور میں نیٹو کے اس حملے کے خلاف مذہبی جماعتوں اور تاجر برادری کی طرف سے احتجاجی مظاہرے اور ریلیاں منعقد کی گئی تاہم ان مظاہروں میں بھی لوگوں کی تعداد کم رہی۔

جماعت اسلامی کے زیر اہتمام ایک احتجاجی جلوس جمعہ کی نماز کے بعد مسجد محبت خان سے نکالا گیا اور اشرف روڈ پر جاکر ایک جلسے کی شکل اختیار کرگیا۔ جلوس کی قیادت جماعت اسلامی کے صوبائی رہنما کر رہے تھے۔اس ریلی میں ڈھائی سے لے کر تین سو کے قریب افراد نے شرکت کی۔

مظاہرین نے پلے کارڈز اور بنیرز اٹھا رکھے تھے جس میں امریکہ کے خلاف نعرے درج تھے۔ عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ اس مظاہرے میں ایک اندازے کےمطابق چار سو سے لے کر پانچ سو کے قریب افراد نے شرکت کی۔

دوسری جانب .لاہور سے نامہ نگار علی سلمان نے بتایا کہ لاہور میں جماعتہ الدعوۃ کے زیر اہتمام گونگے بہرے افراد نے پریس کلب کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا۔

جماعتہ الدعوۃ کے زیر اہتمام پنجاب کے کئی شہروں میں ان پاکستانی فوجیوں کی نماز جنازہ ادا کی گئی جو نیٹو حملےمیں ہلاک ہوئے۔ سنی اتحاد کونسل کے زیر اہتمام ملک بھر میں یوم سیاہ منایا گیا جبکہ سنی تحریک نے داتا دربار کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا۔

اس کے علاوہ جماعت اسلامی جمعیت علمائے اسلام اور جمعیت علمائے پاکستان کے زیر اہتمام لاہور کے مختلف علاقوں میں احتجاجی مظاہرے ہوئے کئی میں امریکی پرچم نذر آتش کیے گئے اور امریکہ مخالف نعرے لگائے گئے۔کسی بھی مظاہرے کے شرکاء کی تعدادچند سوسے زیادہ نہیں رہی جبکہ بعض مقامات پر احتجاج کرنے والے چند درجن ہی تھے۔

کراچی میں بھی جماعت اسلامی، اِہل سنت الجماعت ، پیپلز پارٹی شہید بھٹو، پنجابی پختون اتحاد، مہاجر قومی موومنٹ اور دیگر جماعتوں کی جانب سے احتجاجی مظاہرے کیے تھے، تمام جماعتوں کا ایک نکتہ یعنی نیٹو کی بمباری کے خلاف احتجاج تھا مگر ہر کسی نے اپنے اپنے طور پر پاکستان فوج سے یکہجتی کا اظہار کیا۔

دیگر جماعتوں کے مقابلے میں اہِل سنت الجماعت کے احتجاج میں شرکاء کی تعداد زیادہ تھی۔ڈھائی سو سے زائد کارکنوں سے تنظیم کے رہنما اونگزیب فاروقی نے خطاب کیا۔

پریس کلب پر دوپہر سے شام تک سیاسی جماعتوں کے کارکنوں ٹولیوں کی صورت میں آکر احتجاج ریکارڈ کراتے رہے جس میں امریکی جھنڈہ بھی نظر آتش کیا گیا۔