بمباری سے شدت پسندوں کے تین ٹھکانے تباہ

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مقامی انتظامیہ کے ایک افسر کے مطابق بمباری میں آٹھ افراد کے ہلاک ہونے کی اطلاع ملی ہے جبکہ متعدد زخمی ہیں

پاکستان کے قبائلی عِلاقے اورکزئی ایجنسی میں پاکستانی سکیورٹی فورسز کے جیٹ طیاروں اور گن شپ ہیلی کاپٹروں کی بمباری سے آٹھ افراد کی ہلاکت اور متعدد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔

مقامی انتظامیہ کے ایک افسر نے بی بی سی کو بتایا کہ رواں ہفتے اتوار کو اورکزئی کے پہاڑی عِلاقوں میں واقع شدت پسندوں کے کو نشانہ بنایا گیا ہے اور اس کارروائی میں شدت پسندوں کے تین ٹھکانے مکمل طور پر تباہ ہوگئے ہیں۔

اہلکار کا کہنا ہے کہ بمباری سےآخوند کوٹ اور آس پاس کے عِلاقوں میں شدت پسندوں کے تین ٹھکانے مکمل طور پر تباہ ہوگئے جبکہ خدیزئی میں بھی دو ٹھکانوں کو نقصان پہنچا۔ اہلکار کے مطابق کارروائی میں سکیورٹی فورسز نے توپخانے کو بھی استعمال کیا۔

یاد رہے کہ اورکزئی ایجنسی میں گزشتہ روز سکیورٹی فورسز کی ایک گاڑی بارودی سرنگ سے ٹکراگئی تھی جس کے نتیجے میں ایک افسر سمیت تین اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔

اس کے علاوہ خیبر ایجنسی میں حکام کے مطابق نامعلوم شدت پسندوں نے لڑکیوں کے ایک ہائی سکول کو بھی تباہ کردیا ہے۔

مقامی انتظامیہ کے مطابق یہ واقعہ تحصیل جمرود کے علاقے غنڈی میں پیش آیا۔ نامعلوم شدت پسندوں نے سکول کی عمارت میں بارودی مواد نصب کر کے دو دھماکے کیے جس کے نتیجے میں سکول کے چار کمرے اور برآمدہ مکمل طور پر تباہ جبکہ چاردیواری کو جزوی نقصان پہنچا ہے۔

سرکاری اعداد و شمار کے مطابق اب تک خیبر ایجنسی میں ساٹھ کے قریب سکولوں کو تباہ کیا جاچکا ہے جس کی وجہ سے ان تمام سکولوں میں درس و تدریس کا سلسلہ رُک گیا ہے۔

اسی بارے میں