باجوڑ دھماکہ: دو افراد ہلاک، تین زخمی

پاکستان میں دھماکے کی ایک فائل تصویر تصویر کے کاپی رائٹ bbc
Image caption یہ واقعہ جمعہ کو پیش آیا ہے

پاکستان کے قبائلی علاقے باجوڑ ایجنسی میں حکام کا کہنا ہے کہ ایک ریموٹ کنٹرول بم دھماکے میں دو افراد ہلاک اور تین زخمی ہوگئے ہیں۔

باجوڑ ایجنسی کے ایک مقامی اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ واقعہ جمعہ کو صدر مقام خار سے تقربیا چالیس کلومیٹر دور سلارزئی تحصیل کے علاقے درہ بازار میں پیش آیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ ایک ریموٹ کنٹرول بم بظاہر طالبان مخالف لشکر کے افراد کو نشانہ بنانے کےلیے بازار میں قائم ایک دکان میں نصب کیا گیا تھا۔

حکام کے مطابق ہلاک اور زخمی ہونے والے افراد عام شہری ہیں جنہیں ایجنسی ہیڈ کوارٹر ہسپتال خار منتقل کر دیا گیا ہے۔

اہلکار کے مطابق ایک ملزم کوگرفتار کر لیا گیا ہے۔

مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ کچھ عرصہ سے اس علاقے میں رات کے وقت شدت پسندوں کی سرگرمیوں کی اطلاعات ملتی رہی ہیں جس کی وجہ سے علاقے میں خوف و ہراس بھی پایا جاتا ہے۔

نامہ نگار رفعت اللہ اورکزئی کے مطابق باجوڑ ایجنسی کی دیگر تحصیلوں کی طرح سلارزئی میں بھی طالبان مخالف امن لشکر بدستور فعال ہے اور اس کے رضاکار مختلف علاقوں میں ہر وقت موجود رہتے ہیں۔

باجوڑ میں گزشتہ دو تین سالوں سے طالبان اور امن لشکروں کے مابین جھڑپوں کا سلسلہ جاری ہے جس کی وجہ سے حکومتی حامی قبائلی مشران اور عمائدین پر لاتعداد مرتبہ بم دھماکے اور خودکش حملے کیے گئے ہیں اور جس میں کئی افراد ہلاک بھی ہوچکے ہیں۔

تاہم گزشتہ کچھ عرصے سے علاقے میں سکیورٹی کی صورتحال پہلے کے مقابلے میں بہتر بتائی جارہی ہے ۔

اسی بارے میں