نیٹو کنٹینرز واپس کراچی روانہ

Image caption افغانستان میں نیٹو افواج کے لیے رسد لے جانے والے کنٹنرز چالیس روز سے رکے ہوئے ہیں

بلوچستان کے سرحدی شہر چمن میں نیٹو افواج کے لیے رسد لے جانے والے رکے ہوئے کنٹینروں کو واپس کراچی بھیجے کا عمل شروع ہوگیا ہے۔

چھبیس نومبر کو مہمند میں پاکستان کی سرحدی چوکی پر امریکی حملے کے بعد پاکستان کے راستے نیٹو افو اج کی سپلائی کو روک دیا گیا تھا۔ یہ پابندی ابھی تک جاری ہے۔

بدھ کو دو قافلوں کی صورت میں ستر کے قریب کنٹینر چمن سے براستہ کوئٹہ کراچی کے لیے روانہ ہوئے اور شام کو یہ قافلے فرنٹیئرکور کی سخت نگرانی میں کوئٹہ پہنچ گئےجنہیں کوئٹہ میں بلیلی کے مقام پر روک دیاگیا اوراب یہ قافلہ جمعرات کی صبح کوئٹہ سے کراچی کے لیے روانہ ہوگا۔

اس موقع پر میانوالی کے رہائشی ڈرائیور بہادرخان نے بتایا کہ انہیں شدید سردی میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔

جبکہ پشاور کے رہائشی ڈرائیور مکمل شاہ کا کہنا تھا کہ چالیس دنوں میں ان کے پاس کھانے پینے کے لیےدی گئی رقم بھی ختم ہوگئی ہے اور کمپنی والوں نے بھی انہیں کھانے پینے کے لیے رقم کی فراہمی روک دی ہے ۔

ایک اور ڈرائیور امین گل نے بتایا کہ شدید سردی کے باعث ایک ڈرائیور ہلاک بھی ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ آج وہ بہت خوش ہے کیونکہ وہ کراچی پہنچنے کے بعدگھرجائیں گے جہاں ان کے والدین اور بچے انتظار میں ہیں۔