’میاں افتخار کے بیٹے کے قاتل گرفتار‘

کراچی پولیس(فائل فوٹو) تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption فورسز کراچی سے بہت سے طالبان گرفتار کر جگي ہیں

کراچی پولیس نے صوبہ خیبر پختونخواہ کے وزیرِ اطلاعات میاں افتخار حسین کے بیٹے کے قتل میں بھی ملوث افراد کی گرفتاری کا دعویٰ کیا ہے۔

یاد رہے کہ سی آئی ڈی پولیس نے کراچی کے علاقے منگھو پیرروڈ پر ایک چھاپے کے دوران تحریک طالبان کے چار کارکنان کو گرفتار کیا تھا۔

اس میں عبدالقیوم محسود، محمد شریف مہمند، حبیب خان محسود اور عثمان محسود شامل تھے۔

ایس ایس پی سی آئی ڈی فیاض خان نے بی بی سی کو بتایا کہ ایک ہفتہ قبل کراچی میں تحریک طالبان سے وابستہ ایک گروہ پکڑا گیا تھا۔ اس میں تحریک طالبان محسود گروپ کراچی کے امیر عبدالقیوم محسود بھی شامل تھے۔

فیاض خان کے مطابق گرفتار شدہ طالبان نے دوران تفتیش انکشاف کیا کہ ولی الرحمان اور حکیم اللہ محسود کی ہدایت پر افتخار حسین کے بیٹے راشد حسین کو چوبیس جولائی دوہزار دس کو فائرنگ کر کے قتل کیا تھا۔

فیاض خان کے مطابق عبدالقیوم محسود نے یہ بھی بتایا ہے کہ اس کے دو ساتھی جو راشد حسین کے قتل میں ملوث تھے وہ ایک ڈرون حملے میں مارے گئے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ اس کی اطلاع پشاور کی پولیس کو دی گئی ہے جنہوں اس کی تصدیق کی ہے اور گواہوں کو اس کی تصویریں دکھائیں جنہوں نے اس کی شناخت بھی کر لی ہے۔

انہوں نے کہا کہ کراچی میں بھی اس کے خلاف کافی الزامات ہیں اور پشاور میں بھی اس لیے فی الوقت اسے پشاور پولیس کے حوالے کیا جارہا ہے اور عبدالقیوم محسود کے خلاف کیسز دونوں جگہ چلیں گے۔

اسی بارے میں