پشاور: گیس دھماکے میں سات ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

پشاور کے گنجان آباد علاقے نمک منڈی میں بدھ کی صبح گیس کے دھماکے سے دو مکان تباہ اور سات افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

ہلاک ہونے والوں میں چار بچے اور دو خواتین بھی شامل ہیں۔

پولیس اہلکاروں کے مطابق نمک منڈی کے رہائشی علاقے شاہ قبول کالونی میں ایک مکان میں گیس رسنے کی وجہ سے مکان میں گیس بھر گئی اور جب مکینوں نے ماچس کی تیلی سلگائی تو اس سے دھماکہ ہوا ہے۔ یہ مکان ارشد رحمان نامی شخص کا بتایا گیا ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اس دھماکے سے ارشد رحمان زخمی ہوا ہے جبکہ ان کی بیوی ہلاک ہو گئی ہیں۔ دھماکے سے مکان کی ایک دیوار ملحقہ دوسرے مکان پر گر گئی جس میں نذر محمد اپنی بیوی بچوں کے ہمراہ موجود تھے۔

پولیس اہلکار نے بتایا کہ دوسرے مکان میں زیادہ جانی نقصان ہوا ہے جہاں نذر محمد، ان کی بیوی اور چار بچے ہلاک ہو گئے ہیں۔

اس واقعہ کے بعد ریسکیو اہلکاروں نے ملبہ اٹھانے کا کام شروع کیا جہاں سے لاشیں نکال کر لیڈی ریڈنگ ہسپتال پہنچائی گئی ہیں۔

نمک منڈی میں شاہ قبول کالونی پشاور کے گنجان آباد ترین علاقوں میں شمار ہوتی ہے جہاں بہت سے مکان کچے ہیں۔

پشاور اور پاکستان کے دیگر علاقوں میں سردی کے موسم میں گیس کے ہیٹروں کا استعمال ہوتا ہے ۔

پشاور میں گیس کی لوڈ شیڈنگ کا کوئی شیڈول نہ ہونے کی وجہ سے اکثر اوقات گیس کے چولہے اور ہیٹرز بجھ جاتے ہیں۔

گیس کمپنیوں کی جانب سے لوگوں کی آگہی کے لیے اشتہاری مہم بھی چلائی گئی ہے جس میں کہا جاتا ہے کہ گیس کے ہیٹروں کا استعمال نقصان دہ ہے اورسردی کا مقابلہ کرنے کے لیے ہیٹر کی بجائے گرم کپڑوں کا استعمال کریں۔

اسی بارے میں