عدالت سے رجوع کریں گے: چودھری نثار

تصویر کے کاپی رائٹ

قومی اسمبلی میں قائدِ حزب اختلاف اور مسلم لیگ نون کے رہنما چودھری نثار علی خان نے کہا کہ اگر حکومت نے فوج کی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کے ڈائریکٹر جنرل کی مدتِ ملازمت میں توسیع کی تو وہ اس معاملہ کو سیاسی طور پر اٹھائیں گے اور عدلیہ سے رجوع کیا جائے گا۔

یہ بات انہوں نے ایوانِ وزیر اعلی لاہور میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

چودھری نثار علی خان نے کہا کہ ڈائریکٹر جنرل آئی ایس آئی کی مدت ملازمت میں تیسری بار توسیع سپریم کورٹ کے مقررہ کردہ سروس سٹرکچر کی صریحاً خلاف ورزی ہو گی۔انہوں نے کہا کہ اگر حکومت نے انہیں توسیع دی تو اس کا واضح مطلب ہوگا کہ ڈی جی آئی ایس آئی اور حکومت میں مفاہمت ہوگئی ہے۔ چودھری نثار علی خان نے کہا کہ مسلم لیگ نون نے لاپتہ افراد کی بازیابی کے لیے ایک قرار داد قومی اسمبلی میں جمع کرا دی ہے اور پیر کو اس قرار داد پر بھرپور بحث کی جائے گی۔

قائدِ حزب اختلاف نے چیف الیکشن کمشنر اور سندھ سے تعلق رکھنے والے الیکشن کمیشن کے رکن کو جانبدار قرار دیا اور کہا کہ ان کی موجودگی میں آزادانہ اور شفاف الیکشن ہونا ممکن نہیں۔

چودھری نثار علی خان نے کہا کہ وزیراعظم نے ایسے اشارے دیے تھے کہ حکومت اس برس ستمبر میں الیکشن کروا دے گی لیکن اب لگتا ہے کہ حکومت اپنے اس وعدے سے بھی پیچھے ہٹ رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ایسا ہوا تو مسلم لیگ نون دیگر سیاسی جماعتوں کے ساتھ مل کر حکومت پر دباؤ بڑھا ئے گی۔

اسی بارے میں