بلوچستان: بجلی،گیس کی کمی کےخلاف احتجاج

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption پاکستان کے تمام علاقے میں لوگوں بجلی اور گیس کی کمی کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں

بلوچستان کے ضلع ژوب کے نوجوانوں نے علاقے میں گیس کی سپلائی اور بجلی کی کمی دورکرنے کے لیے کوئٹہ تک لانگ مارچ کیا ہے اور کہا کہ ان کا احتجاج اس وقت تک جاری رہے گا جب تک ان کے مطالبات تسلیم نہیں ہوں گے۔

کوئٹہ سے بی بی سی کے نامہ نگارایوب ترین کے مطابق نوجوان ایکشن کمیٹی ژوب کے نوجوانو ں نے ضلع ژوب کو گیس کی فراہمی اور بجلی کی کمی کے خاتمے کے لیے چوبیس مارچ کو کوئٹہ تک لانگ مارچ کا آغاز کیا اور تین سوساٹھ کلومیٹر کا راستہ سولہ دنوں میں پیدل طے کرکے سنیچر کی شام کو کوئٹہ پنہچ گئے۔

لانگ مارچ میں شا مل اکثرنوجوانوں کے پاؤں میں چھالےپڑھ گئے جبکہ کئی شدید گرمی کی وجہ سے راستے میں بے ہوش بھی ہوئے۔

لانگ مارچ میں شامل سوسے زیادہ نوجوانوں نے کہا ہے کہ بجلی کی کمی کے باعث ان کی زراعت تباہ ہوئی ہے۔ جس کے باعث علاقے میں بے روز گاری میں اضافہ ہوا ہے۔ نوجوان ایکشن ژوب کے جنرل سیکرٹری نقیب اللہ مندوخیل کے مطابق ژوب کا علاقہ جنگلات سے مالامال تھا اور گیس نہ ہونے کی وجہ سے لوگ سردیوں میں جنگلات کاٹنے پرمجبور ہوئے ہیں۔ جس کے باعث اس وقت ژوب میں جنگلات کم ہو رہے ہیں۔

لانگ مارچ کے شرکاء اتوار کو کوئٹہ میں گورنرہاؤس کے سامنے دھرنا دیں گے۔ان کا کہنا ہے کہ ان کا احتجاج مطالبات تسلیم ہونے تک جاری رہے گا۔

اسی بارے میں