پاکستان: وزیرِاعظم گیلانی لندن روانہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کے وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی بارہ رکنی وفد کے ہمراہ پانچ روزہ سرکاری دورے پر منگل کو لندن پہنچ رہے ہیں۔

دفتر خارجہ کے مطابق پاکستان اور برطانیہ کے وزرائے اعظم دونوں ممالک کے درمیاں گزشتہ سال شروع کردہ ’سٹریٹجک مذاکرات‘ کی پیش رفت کا جائزہ لیں گے۔

واضح رہے کہ وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی جب برطانوی دورے پر روانہ ہوئے تو سپریم کورٹ نے ان کے خلاف توہین عدالت کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری کردیا۔ سپریم کورٹ کے تفصیلی فیصلے میں بھی یہ واضح نہیں کہ عدالت نے انہیں نااہل قرار دیا ہے کہ نہیں۔

دونوں رہنما سنہ دو ہزار پندرہ تک دو طرفہ تجارت کا حجم ڈھائی ارب پاؤنڈ تک بڑھانے کے لیے تجارت اور سرمایہ کاری کے لیے روڈ میپ کا بھی اعلان کریں گے۔

وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی کے وفد میں تین وفاقی وزراء رحمٰن ملک، قمر الزمان کائرہ اور حفیظ شیخ، تین وزرائے مملکت رضا حیات حراج، سلیم مانڈوی والا اور عباس خان آفریدی، وزیراعظم کی معاون خصوصی شہناز وزیر علی اور پانچ پارلیامینٹیرینز آفتاب شعبان میرانی، مہرین بھٹو، غلام مصطفیٰ شاہ، پلواشہ خان اور عبدالغنی ٹالپر بھی شامل ہیں۔

اسلام آباد میں بی بی سی کے نامہ نگار اعجاز مہر نے بتایا ہے کہ وزیرِخارجہ حنا ربانی کھر کو وزیراعظم کے ہمراہ جانا تھا لیکن عین وقت پر ان کے خاندان میں موت کی وجہ سے وہ وزیرِ اعظم کے ہمراہ نہیں جا سکیں۔

امکان ہے کہ وہ بدھ کو کمرشل فلائٹ کے ذریعے لندن روانہ ہوں گی جبکہ وفاقی وزیر تجارت مخدوم امین فہیم پہلے سے لندن میں ہیں جو وہاں سے وزیراعظم کے وفد میں شامل ہوں گے جس کے بعد ان کے وفد کے اراکین کی تعداد چودہ ہوجائے گی۔

وزیراعظم ہاؤس کے ذرائع نے بتایا کہ وزیراعظم کے ہمراہ پرسنل میڈیا اور سکیورٹی سٹاف کے علاوہ آٹھ رکنی صحافیوں کا وفد بھی سفر کر رہا ہے جبکہ آٹھ کے قریب صحافیوں کو برطانیہ کا ویزہ نہ دیے جانے کی وجہ سے ایئرپورٹ سے واپس روانہ کر دیا گیا جبکہ دو صحافی پہلے ہی لندن میں ہیں جو ان کے وفد کا حصہ ہیں۔

دفترِخارجہ سے جاری ہونے والے ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ گزشتہ برس اپریل میں جب برطانوی وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون پاکستان کے دورے پر آئے تھے تو دونوں ممالک نے سٹریٹجک مذاکرات شروع کیے تھے جس میں تجارت اور کاروبار، مالی اور ترقیاتی امداد، تعلیم اور صحت، ثقافت، دفاع اور سیکورٹی شامل ہیں۔

وزیراعظم کا وفد برطانوی پارلیمینٹیرینز، وزارء اور کاروباری شخصیات سے ملاقاتیں کرے گا جبکہ وزیراعظم برطانیہ میں مقیم پاکستانیوں سے خطاب کرنے کے علاوہ قونصلر ہال کا سنگ بنیاد بھی رکھیں گے۔

دفتر خارجہ کے مطابق دس لاکھ سےزائد پاکستانی نژاد برطانوی شہری ہیں اور برطانیہ یورپ کا دوسرا بڑا تجارتی پارٹنر ہے۔

برطانوی وزیرِ اعظم ڈیوڈ کیمرون نے گزشتہ برس اپریل میں پاکستان کو پینسٹھ کروڑ پاؤنڈ پرائمری تعلیم کے لیے امداد دینے کا اعلان کیا تھا اور یہ برطانیہ کی جانب سے کسی بھی ملک کو تعلیم کے لیے دی جانے والی سب سے بڑی امداد ہے۔

واضح رہے کہ وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی جب برطانوی دورے پر روانہ ہوئے تو سپریم کورٹ نے ان کے خلاف توہین عدالت کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری کردیا۔ سپریم کورٹ کے تفصیلی فیصلے میں بھی یہ واضح نہیں کہ عدالت نے انہیں نااہل قرار دیا ہے کہ نہیں۔

اسی بارے میں