منٹو کو اعلیٰ ترین سول اعزاز دینے کی سفارش

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption میاں رضا ربانی نے تجویز پیش کی سینیٹ حکومت کو سفارش کرے کے منٹو کو اعلیٰ ترین سول اعزاز دیا جائے۔

پاکستانی پارلیمان کے ایوانِ بالا یعنی سینیٹ نے حکومت سے سفارش کی ہے کہ پاکستان کے نامور مصنف سعادت حسن منٹو کو اعلیٰ ترین سول اعزاز دیا جائے۔

جمعہ کو سعادت حسن منٹو کے صہ سالہ یومِ پیدائش کے موقع پر سینیٹ میں تقریر کرتے ہوئے میاں رضا ربانی نے کہا کہ ادب کے شعبے میں سعادت حسن منٹو کی بہت خدمات ہیں اور آج کل جو افراتفری کا عالم ہے اس سے نکلنے کے لیے منٹو جیسے لوگوں کی تحریریں پڑھنے اور ان سے رہنمائی لے کر نکلا جاسکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ذوالفقار علی بھٹو نے ادیبوں اور شاعروں کے لیے اکادمیِ ادبیات جیسا ادارہ بنایا لیکن یہ ادارہ وہ کام نہیں کر رہا جس کے لیے اسے بنایا گیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں کئی ایسے لوگوں کو بھی اعزازات سے نوازا جاتا ہے جو اس کے مستحق نہیں لیکن آج تک سعادت حسن منٹو جیسے لوگوں کو نظر انداز کیا گیا ہے۔

میاں رضا ربانی نے تجویز پیش کی سینیٹ حکومت سے سفارش کرے کہ منٹو کو اعلیٰ ترین سول اعزاز دیا جائے۔

ان کی تجویز کی حمایت کرتے ہوئے قائد ایوان اور حکمران جماعت پیپلز پارٹی کے سیکریٹری جنرل جہانگیر بدر نے چیئرمین سیینٹ سے کہا کہ وہ حکومت کو اس بارے میں سفارش بھیجیں کیونکہ منٹو اس اعزاز کے حقدار ہیں۔

اسی بارے میں