نیٹو سپلائی روکیں گے: جماعتِ اسلام

جماعتِ اسلامی تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption جماعتِ اسلامی کے مطابق مسلم لیگ نون اور تحریکِ انصاف کو بھی ان کی نیٹو مخالف مہم میں شامل ہونا چاہیے

افغانستان میں موجود نیٹو افواج کو پاکستان کے راستے سامان کی ترسیل کی بحالی کے بعد منگل کو خیبر ایجنسی میں پاک افغان سرحد کے قریب جماعت اسلامی نے احتجاجی مظاہرہ کیا ہے۔

مظاہرے کے دوران مقررین نے کہا کہ وہ نیٹو افواج کے لیے ٹینکرز اور کنٹینرز یہاں سے نہیں گزرنے دیں گے۔

پشاور سے بی بی سی کے نامہ نگار عزیز اللہ خان کے مطابق نیٹو افواج کو سامان کی ترسیل کی بحالی اور ڈرون حملوں کے خلاف جماعت اسلامی کا احتجاجی مارچ پشاور سے شروع ہوا اور خیبر ایجنسی کی تحصیل جمرود میں باب خیبر کے قریب جلسہ منعقد کیا گیا۔ اس جلسے میں جماعت اسلامی کے کارکنوں اور خیبر ایجنسی کے مقامی لوگوں نے شرکت کی ہے۔

اس جلسے میں شریک افراد نے جماعت کے پرچم اٹھا رکھے تھے اور امریکہ کے خلاف نعرہ بازی کر رہے تھے۔

جلسے سے خطاب کرتے ہوئے جماعت اسلامی کے سربراہ سید منور حسن کا کہنا تھا کہ دیگر سیاسی جماعتوں جیسے پاکستان مسلم لیگ نواز اور پاکستان تحریک انصاف کو بھی ان کی اس مہم میں شامل ہونا چاہیے ۔ انھوں نے کہا کہ امریکہ کسی کا دوست نہیں ہے ، بلکہ پاکستان اور اسلام کا دشمن ہے۔

منور حسن کا کہنا تھا کہ نواز شریف اور عمران خان قبائلی علاقوں سمیت ملک بھر میں عوام سے رابطہ کریں اور نیٹو سپلائی کو بند کریں۔ ’اگر وہ ایسا نہیں کرتے تو کل کو اقتدار میں آنے کے بعد بھی وہ یہ کام نہیں کریں گے اس لیے انھیں بھی اقتدار میں عوام حصہ نہ دیں۔‘

جلسہ عام سے خطاب میں مقررین نے کہا کہ وہ نیٹو سپلائی کو یہاں خیبر ایجنسی میں روکیں گے کیونکہ زیادہ سپلائی اسی علاقے ہو رہی ہے۔ مقررین نے اپنی تقاریر میں یہ ذکر نہیں کیا کہ وہ کراچی سے نیٹو افواج کی ترسیل ہونے ہی نہیں دیں گے۔

اسی بارے میں