رچرڈ اولسن پاکستان میں نئے امریکی سفیر نامزد

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption رچرڈ اولسن افغانستان، سعودی عرب سمیت کئی ممالک میں فرائض سرانجام دے چکے ہیں

امریکی صدر باراک اوباما نے پاکستان اور اس کے ہمسایہ ملک افغانستان کے لیے اپنے نئے سفیروں کے ناموں کا اعلان کیا ہے۔

دریں اثناء پاکستان میں سبکدوش ہونے والے امریکی سفیر کیمرون منٹر نے اسلام آباد میں صدر آصف علی زرداری سے ایوان صدر میں الوداعی ملاقات کی ہے۔

نیٹو سپلائی کی بحالی سے بات ختم نہیں ہو جاتی: امریکی سفیر

پاکستان میں رچرڈ اولسن کو نیا سفیر نامزد کیا گیا ہے جو اس سے پہلے متحدہ عرب امارات میں امریکی سفیر رہ چکے ہیں جبکہ افغانستان میں جیمز کننگھم کو نیا امریکی سفیر مقرر کیا گیا ہے۔

نامزد کیے جانے والے دونوں سفیروں کے ناموں کی امریکی ایوان نمائندگان کے ایوان بالا یا سینیٹ سے توثیق کرانا ہو گی۔

رچرڈ اولسن اسلام آباد میں تعینات امریکی سفیر کمیرون منٹر کی جگہ لیں گے۔

کیمرون منٹر نے اس سال مئی میں اٹھارہ ماہ سفیر رہنے کے بعد اس عہدے سے سبکدوش ہونے کا اعلان کیا تھا۔

امریکی میگزین فارن پالیسی کے مطابق رچرڈ اولسن سنہ دو ہزار گیارہ سے افغانستان میں امریکی سفارتخانے میں ترقیاتی اور معاشی امور کے ڈائریکٹر ہیں۔

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں تعیناتی سے قبل وہ متحدہ عرب امارات کے سفیر تھے۔ اس کے علاوہ وہ میکسیکو، سعودی عرب، تیونس، عراق سمیت کئی ممالک میں فرائص سرانجام دے چکے ہیں۔

دریں اثناء پاکستان میں موجودہ امریکی سفیر کیمرون منٹر نے اسلام آباد میں صدر آصف علی زرداری سے ایوان صدر میں الوداعی ملاقات کی ہے۔

پاکستان کی سرکاری خبر رساں ایجنسی اے پی پی کے مطابق صدر زرداری نے کیمرون منٹر کی سفارتی مہارت، پاک امریکہ سٹریٹجک مذاکرات میں ان کے کردار اور نہایت نازک وقت میں پاک امریکہ تعلقات کو تقویت دینے اور مستحکم کرنے میں ان کی معاونت کو سراہا۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption سبکدوش ہونے والے امریکی سفیر کمیرون منٹر نے چھبیس اکتوبر سال دو ہزار دس میں اپنی ذمہ داریاں سنبھالی تھیں

خیال رہے کہ سبکدوش ہونے والے امریکی سفیر کمیرون منٹر نے چھبیس اکتوبر سال دو ہزار دس میں اپنی ذمہ داریاں سنبھالی تھیں۔

کمیرون منٹر کے دور میں پاکستان اور امریکہ کے تعلقات میں کئی نشیب و فراز آئے۔

ستائیس جنوری سال دو ہزار گیارہ میں لاہور میں دو پاکستانی شہریوں کے قتل کے الزام میں امریکی اہلکار ریمنڈ ڈیوس گرفتار ہوئے اور سولہ مارچ کو رہا کر دیے گئے۔

اس واقعہ پر دونوں ممالک کے درمیان تعلقات میں کشیدگی ابھی کم ہونا شروع ہی ہوئی تھی کہ دو مئی کو ایبٹ آباد میں یکطرفہ امریکی کارروائی میں القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن ہلاک ہو گئے۔اسی سال چھبیس نومبر کو پاکستان کے قبائلی علاقے مہمند ایجنسی میں افغان سرحد پر پاکستانی فوج کی چوکیوں پر نیٹو کے حملے کے بعد دونوں ممالک کے درمیان پہلے سے کشیدہ تعلقات میں مزید تناؤ آیا۔

دسمبر دو ہزار گیارہ میں امریکہ فوج کے اعلیٰ ترین کمانڈر ایڈمرل مائیک مولن نے بیان دیا کہ شدت پسند گروہ حقانی نیٹ ورک پاکستان کی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کا آلہ کار ہے۔ اس پر پاکستانی فوج نے شدید ردعمل کا اظہار کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption امریکی اہلکار ریمنڈ ڈیوس گرفتار ہوئے

فروری دو ہزار بارہ میں امریکی ایوانِ نمائندگان کی امورِ خارجہ کی کمیٹی میں بلوچستان کی صورتحال پر عوامی سماعت کے دوران کہا کہ پاکستان پر دباؤ ڈالا جائے کہ وہ اس شورش زدہ صوبے کے حالات معمول پر لانے کے لیے اقدامات کرے۔ اس بیان کے بعد پاکستان میں عوامی اور حکومتی سطح پر شدید احتجاج کیا گیا اور اسے ملکی کے داخلی معاملات میں مداخلت قرار دیا گیا۔

اس وقت جب کیمرون منٹر سبکدوش ہو رہے ہیں تو امریکی کی سلالہ چیک پوسٹ پر واقعہ پر معذرت کے بعد پاکستان کی جانب سے نیٹو سپلائی بحال کرنے کا اعلان کیا جا چکا ہے اور دونوں ممالک میں اب بار پھر اعتماد کی بحالی کے حوالے سے بات چیت کر رہے ہیں۔

چند دن پہلے امریکی سفیر کیمرون منٹر نے بی بی سی کو دیے گئے ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ افغانستان میں تعینات نیٹو افواج کے لیے رسد کے زمینی راستے کی بحالی کے باوجود، بات یہیں ختم نہیں ہوجاتی انہیں ابھی اقتصادی تعاون اور پاکستان میں موجود دہشت گردوں سے نمٹنے کے لیے بہت کچھ کرنا ہے۔

اس انٹرویو کے تناظر میں پاکستان آنے والے نئی امریکی سفیر رچرڈ اولسن کو مختلف محاذوں پر سخت چینلجز کا سامنا ہو گا۔

اسی بارے میں