شمالی وزیرستان: ڈرون حملے میں چار افراد ہلاک

Image caption ماہِ رمضان شروع ہوتے ہی شمالی و جنوبی وزیرستان میں امریکی جاسوس طیاروں کے پروازوں میں اضافہ ہوا ہے۔

پاکستان کے قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں حکام کے مطابق امریکی جاسوس طیارے نے ایک مکان کو نشانہ بنایا ہے جس کے نتیجہ میں چارافراد ہلاک ہوئے ہیں۔

مقامی انتظامیہ کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ واقعہ اتوار کی شام چار بجکر پچیس منٹ پر تحصیل میرعلی کے علاقے خُوشحالی میں پیش آیا۔ انہوں نے کہا کہ حملے میں چار شدت پسند ہلاک ہوئے ہیں جن کا تعلق حافظ گل بہادر گروپ کے مقامی طالبان سے بتایا جاتا ہے۔

اہلکار کے مطابق امریکی جاسوس طیارے سے چھ میزائل فائر کیے گئے ہیں جس سے مکان بھی مکمل طور تباہ ہوگیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہلاک ہونے والوں کی قومیت ابھی تک معلوم نہیں ہوسکا اور نہ ہی یہ معلوم ہوسکا کہ کیا اس میں کوئی غیر مُلکی شامل ہے یا نہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ جس مکان پر میزائل حملہ ہوا ہے یہ مکان گزشتہ ایک عرصے سے حافظ گل بہادر گروپ کے مقامی طالبان کے زیر استعمال تھا اور اس میں غیر مُلکیوں کا آنا جانا بھی تھا۔

مقامی لوگوں کا کہنا کہ رمضان شروع ہوتے ہی شمالی و جنوبی وزیرستان میں امریکی جاسوس طیاروں کے پروازوں میں اضافہ ہوا ہے۔ جس کی وجہ سے تروایح کے دوران ڈرون حملے کے خطرات سے عام شہریوں میں بھی خوف پھیل گیا ہے۔

ایک عینی شاہد نے بی بی سی کو بتایا کہ ’تروایح کے دوران ہر رکعت میں یہ خوف رہتا ہے کہ اس طرح نہ ہوں کہ کوئی ڈرون حملہ ہوجائے کیونکہ آج کل ایک تو ڈرون طیاروں میں اضافہ ہوا ہے اور دوسرا یہ کہ یہ طیارے بہت نیچے پرواز کرتے ہیں‘۔

اسی بارے میں