’ملالہ کے لیے آئندہ چند دن بہت اہم‘

آخری وقت اشاعت:  بدھ 10 اکتوبر 2012 ,‭ 19:58 GMT 00:58 PST

امن ایوارڈ یافتہ ملالہ یوسفزئی پر حملہ

بی بی سی اردو سروس میں گل مکئی کے نام سے سوات سے ڈائریاں لکھ کر عالمی شہرت حاصل کرنے والی ملالہ یوسفزئی سوات میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے شدید زخمی ہو گئی ہیں۔

دیکھئیےmp4

اس مواد کو دیکھنے/سننے کے لیے جاوا سکرپٹ آن اور تازہ ترین فلیش پلیئر نصب ہونا چاہئیے

متبادل میڈیا پلیئر چلائیں

سوات میں طالبان کے حملےمیں شدید زخمی ہو جانے والی چودہ سالہ طالبہ ملالہ یوسفزئی کے معالجین ان کی جان بچانے کی کوششوں میں مصروف ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ اگلے آٹھ سے دس دن ان کی زندگی کے لیے انتہائی اہم ہیں۔

ملالہ کے چچا محمود الحسن نے پشاور کے سی ایم ایچ ہسپتال سے بدھ کی صبح بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ان کی بھتیجی فی الحال بے ہوش ہیں اور ان کا آپریشن ابھی جاری ہے۔

کلِک گاڑی روک کر ملالہ کا پوچھا اور گولی چلا دی

کلِک گل مکئی کی ڈائری پڑھیے

محمود الحسن نے کہا کہ ڈاکٹروں کے مطابق ملالہ کی صحت کے بارے میں صورتحال واضح ہونے میں ابھی مزید چند گھنٹے لگیں گے۔

اس سے قبل منگل کو خیبر پختونخوا کے صوبائی وزیر بشیر بلور نے پشاور میں ہمارے نامہ نگار سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ گولی اب بھی ملالہ کے جسم میں ہی ہے اور ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ ملالہ کی زندگی کے لیے اگلے آٹھ سے دس روز نہایت اہم ہیں۔

"گولی اب بھی ملالہ کے سر میں ہے۔ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ ملالہ کی زندگی کے لیے اگلے پانچ سے دس دن نہایت اہم ہیں: سینیئر صوبائی وزیر بشیر احمد بلور"

عزیز اللہ خان

بی بی سی اردو ڈاٹ کام، پشاور

صوبائی وزیر بشیر بلور کا کہنا تھا کہ گولی ملالہ کے ماتھے میں لگی اور دماغ سے گزر کر گردن کی طرف گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ حملے سب پر ہو رہے ہیں اور خود ان پر بھی ہوئے ہیں ’لیکن ملالہ یوسفزئی کو تحفظ فراہم کرنے کی زیادہ ضرورت تھی۔ ملالہ کو سکیورٹی فراہم کرنی چاہیے تھی اور سکیورٹی فراہم کرنا انتظامیہ کا کام تھا‘۔

بی بی سی اردو سروس میں گل مکئی کے نام سے سوات سے ڈائریاں لکھ کر عالمی شہرت حاصل کرنے والی ملالہ یوسفزئی منگل کو سوات میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے شدید زخمی ہوگئی تھیں اور ابتدائی طبی امداد کے بعد ملالہ کے والد کے اصرار پر انہیں پشاور منتقل کیا گیا تھا۔

کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان نے ملالہ یوسف زئی پر حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔