توہین مذہب مقدمہ: پیش امام کی ضمانت منظور

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 11 اکتوبر 2012 ,‭ 12:57 GMT 17:57 PST

اسلام اباد کی ایک عدالت نے توہین مذہب کے مقدمے کے شواہد تبدیل کرنے کے الزام میں گرفتارپیش امام کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دیا ہے۔

اسلام آباد کی ایک مقامی عدالت نے توہین مذہب کے مقدمے کے شواہد تبدیل کرنے کے الزام میں گرفتار مقامی مسجد کے پیش امام کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دیا ہے۔

اس سے پہلے عدالت نے توہین مذہب کےالزام میں گرفتار ہونے والی عیسائی لڑکی رمشا مسیح کو بھی ضمانت پر رہا کردیا تھا۔

رمشا کی ضمانت گُزشتہ ماہ منظور کی گئی تھی اور ضمانت پر رہائی کے بعد وفاقی حکومت نے حفاظتی نکتہ نظر سے رمشا اور اُن کے اہلخانہ کو نامعلوم مقام پر منتقل کیا ہے اور اُن کی سیکورٹی کے لیے پولیس اہلکار بھی تعینات کیے گئے ہیں۔

ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج جواد عباس نے جمعرات کو ملزم خالد جدون کے وکیل کو دو لاکھ کے ضمانتی مچلکے عدالت میں جمع کروانے کا حکم ہے۔

ہمارے نامہ نگار کے مطابق ضمانت کی درخواست کے حق میں خالد جدون کے وکیل واجد گیلانی نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ اُن کے موکل کے بارے میں اس مسجد کے نائب خطیب حافظ زبیر نے جو بیان دیا ہے اُس میں صرف ایک جگہ اُن کے موکل کا ذکر ہے جبکہ باقی جگہ پر صرف حافظ یا مولوی صاحب لکھا ہوا ہے۔

اُنہوں نے کہا کہ ایسا دکھائی دیتا ہے کہ حافظ زبیر سے مجسٹریٹ یا اس مقدمے کے تفتیشی افسر نے زبردستی بیان لیا ہے۔

اُنہوں نے کہا کہ توہین مذہب کا مقدمہ وفاقی یا صوبائی حکومت کی ہدایات پر درج کیا جاتا ہے جبکہ اس مقدمے میں حکومت کی طرف سے کوئی احکامات نہیں دیے گئے تھے۔

واجد گیلانی کا کہنا تھا کہ اس مقدمے میں دو گواہوں نے بھی عدالت میں بیان حلفی جمع کروائے ہیں کہ اُنہوں نے اس مقدمے کی تفتیش کرنے والے افسران کو یہ کبھی نہیں کہا کہ اُنہوں نے خِالد جدون کو اس مقدمے کے شواہد تبدیل کرتے ہوئے دیکھا ہے۔

ملزم کے وکیل نے سماعت کے دوران عدالت میں اسلام آباد ہائی کورٹ کا وہ ڈیکرلیشن بھی پیش کیا جس میں کہا گیا ہے کہ اگرچہ عدالت عالیہ نے توہین مذہب کے مقدمے کی سماعت سے متعلق حکم امتناعی جاری کر رکھا ہے لیکن ضمانت کی درخواست اگر میرٹ پر ہے تو اُس پر اس حکم امتناعی کا اطلاق نہیں ہوتا اور متعلقہ عدالت درخواست کی سماعت کرسکتی ہے۔

ڈسٹرکٹ اٹارنی عبدالحفیظ پراچہ نے بھی ضمانت کی اس درخواست کی مخالفت نہیں کی اور اُن کا کہنا تھا کہ ملزم کے خلاف استغاثہ کے پاس کوئی ٹھوس شواہد موجود نہیں ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔