ملالہ پر حملہ: چھپن افراد کی گرفتاریاں اور رہائی

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 11 اکتوبر 2012 ,‭ 11:14 GMT 16:14 PST
ملالہ پر حملہ

ملالہ پر حملے پر پورے ملک میں شدید ردِعمل دیکھنے میں آیا ہے

صوبہ خیبر پختونخوا کے ضلع سوات میں چودہ سالہ ملالہ یوسفزئی پر حملے کے الزام میں پولیس نے چھپن مشکوک افراد کو حراست میں لیا ہے لیکن پولیس کے مطابق تمام افراد کو پوچھ گچھ کے بعد رہا کر دیا گیا ہے۔

ملالہ یوسفزئی پر حملے کے ملزمان کی گرفتاری کے لیے سوات اور دیگر علاقوں میں پولیس نے چھاپے مارے ہیں۔

پولیس کے مطابق اکتالیس افراد بدھ کو اور پندرہ افراد جمعرات کی صبح حراست میں لیے گئے۔

ان تمام افراد سے پوچھ گچھ کی گئی اور ان کے بارے میں معلومات حاصل کرنے اور جانچ پڑتال کے بعد انہیں رہا کر دیا گیا۔

سوات میں پولیس اہلکاروں نے بتایا کہ اب تک کسی اہم ملزم کو گرفتار نہیں کیا جا سکا ہے تاہم اس بارے میں کوششیں جاری ہیں۔

اس واقعے کے تفتیشی افسر انسپکٹر عبدالواحد خان سے جب رابطہ قائم کیا گیا تو انھوں نے مختصر گفتگو میں بتایا کہ اب تک انھیں کوئی کامیابی حاصل نہیں ہوئی ہے، تاہم انھوں نے کہا کہ پولیس ملزمان کی گرفتاری کے لیے کوششیں کر رہی ہے۔

سوات کے ڈپٹی انسپکٹر جنرل پولیس اور ضلعی پولیس افسر سے رابطے کی بارہا کوشش کی گئی لیکن ان سے رابطہ نہیں ہو سکا۔

سوات سے تعلق رکھنے والی قومی امن ایوراڈ یافتہ ملالہ یوسفزئی کو منگل کو نامعلوم افراد نے اس وقت فائرنگ کر کے زخمی کر دیا تھا جب وہ سکول سے گھر جانے کے لیے سکول وین میں سوار تھیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ ملزمان نے پہلے ملالہ یوسفزئی کے بارے میں معلومات حاصل کر کے ان کی شناخت کی اور پھر ملالہ پر فائرنگ کی جس سے ملالہ یوسفزئی سمیت تین طالبات زخمی ہو گئی تھیں۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔