’اٹھارہ لاکھ بچے پولیو کے قطروں سے محروم‘

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 19 اکتوبر 2012 ,‭ 21:27 GMT 02:27 PST

حالیہ مہم میں ڈھائی لاکھ کارکنوں نے قطرے پلانے کے عمل میں حصہ لیا

عالمی ادارۂ صحت یعنی ڈبلیو ایچ او کے مطابق، پاکستان میں پولیو سے بچاؤ کی حالیہ قومی مہم میں بھی اٹھارہ لاکھ بچوں کو اس بیماری سے بچاؤ کے قطرے نہیں پلائے جا سکے۔

یہ اس سال کی چوتھی اور آخری قومی مہم تھی۔

پندرہ اکتوبر سے شروع ہونے والی اس تین روزہ مہم میں تین کروڑ بیس لاکھ بچوں کو قطرے پلائے جانے تھے لیکن عالمی ادارۂ صحت کے پاکستان میں پولیو کے خاتمے کی مہم کے نگراں ڈاکٹر الائس ڈری نے بی بی سی اردو کو بتایا کہ اس مہم کے دوران جہاں سترہ لاکھ بچوں تک پہنچا نہیں جا سکا وہیں ساٹھ ہزار بچوں کے والدین نے اپنے بچوں کو قطرے پلوانے سے انکار کر دیا۔

اسلام آباد میں ہماری نامہ نگار کے مطابق ڈاکٹر الائس ڈری نے کہا کہ اس مہم میں شمالی و جنوبی وزیرستان، خیبر ایجنسی کی باڑہ اور تیراہ تحصیلیں اور کوئٹہ جیسے اہم علاقے شامل نہیں کیے جا سکے اور ان علاقوں تک رسائی نہ ہونے کی وجہ سے دو لاکھ ساٹھ ہزار بچوں کو قطرے نہیں پلائے جائیں گے۔

یاد رہے کہ بدھ کو کوئٹہ میں پولیو مہم کے ایک کارکن کو فائرنگ کر کے ہلاک کیا گیا تھا۔

ڈاکٹر الائس ڈری نے کہا کہ اس واقعے کی تفتیش شروع کر دی گئی ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ وزیرستان میں طالبان کی پولیو مہم کی مخالفت کی وجہ سے بچوں تک رسائی نہیں ہے جبکہ دیگر علاقوں تک شورش کے باعث پہنچا نہیں گیا۔

" پاکستان میں دو ہزار تیرہ تک پولیو ختم نہیں ہو سکے گا اور جلداز جلد بھی 2014 تک اس مرض کا ملک سے خاتمہ ممکن ہے۔"

ڈاکٹر الائس ڈری

ڈاکٹر الائس ڈری نے بتایا کہ حالیہ مہم میں ڈھائی لاکھ کارکنوں نے قطرے پلانے کے عمل میں حصہ لیا۔

انہوں نے کہا کہ گو کہ قبائلی علاقوں اور فاٹا میں ان بچوں کی شرح نسبتاً کم ہے جنہیں قطرے نہیں پلائے گئے، تاہم پولیو کے وائرس کی موجودگی کے باعث اس کے پھیلنے کا خطرہ ضرور ہے۔

پاکستان دنیا کے ان تین ممالک میں سے ایک ہے جہاں پولیو کا وائرس اب بھی پایا جاتا ہے۔ دوسرے ممالک افعانستان اور نائجیریا شامل ہیں۔

پاکستان میں اس سال اب تک پولیو کے چھیالیس نئے کیسز سامنے آ چکے ہیں جبکہ پچھلے سال، اسی عرصہ کے دوران، ایک سو چونسٹھ کیس تھے۔ گذشتہ سال، ان کیسز کی مجموعی تعداد ایک سو اٹھانوے رہی تھی۔

حکومت نے پولیو کے خاتمے کے لیے اس سال ہنگامی بنیاد پر منصوبہ تشکیل دیا ہے تاہم ڈاکٹر ڈری کا کہنا ہےکہ پاکستان میں دو ہزار تیرہ تک پولیو ختم نہیں ہو سکے گا اور جلداز جلد بھی 2014 تک اس مرض کا ملک سے خاتمہ ممکن ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔