پشاور: جعلی سند، وزیر پر فرد جرم عائد

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 1 نومبر 2012 ,‭ 12:19 GMT 17:19 PST

پشاور کی ایک مقامی عدالت نے صوبہ خیبر پختونخوا کے کھیلوں اور ثقافت کے صوبائی وزیر سید عاقل شاہ پر جعلی سند کے مقدمے میں فرد جرم عائد کر دی ہے۔

عدالت نے مقدمے کی آئندہ سماعت کے لیے پندرہ نومبر کی تاریخ مقرر کی ہے۔

جمعرات کو صوبائی وزیر کھیل سید عاقل شاہ ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج پشاور شبیر خان کی عدالت میں پیش ہوئے جہاں ان پر فرد جرم عائد کر دی گئی ہے ۔

سید عاقل شاہ نے صحت جرم سے انکار کیا ہے۔

سید عاقل شاہ پر الزام ہے کہ انہوں نے سن دو ہزار آٹھ کے انتخابات میں صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی ایف چار سے انتخاب میں حصہ لینے کے لیے بی اے کی جعلی سند پیش کی تھی۔

سید عاقل شاہ کے خلاف مقدمے کی سماعت ریجنل الیکشن کمیشن کی شکایت پر شروع کی گئی ہے۔

ریجنل الیکشن کمیشن کے مطابق سید عاقل شاہ نے جو سند انتخابات میں حصہ لینے کے لیے پیش کی تھی وہ جعلی ہے اس لیے ان کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جائے۔

اس سے پہلے اسی مقدمے کی سماعت کے دوران چوبیس اکتوبر کو عاقل شاہ کے خلاف عدالت کے سامنے پیش نے ہونے پر جج نے قابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کر دیے تھے لیکن بعد میں صوبائی وزیر عدالت کے سامنے پیش ہوئے تو وارنٹ گرفتاری خارج کر دیے گئے تھے۔

سید عاقل شاہ نے پنجاب یونیورسٹی کی بی اے کی ڈگری پیش کی تھی اور یونیورسٹی گرانٹ کمیشن کی جانب سے اسناد کی جانچ پڑتال کے بعد اگست دو ہزار دس میں عاقل شاہ کی بی اے کی ڈگری جعلی قرار دی گئی تھی۔

عاقل شاہ کے وکیل کا کہنا تھا کہ ڈگری کے حوالے سے یونیورسٹی گرانٹ کمیشن کے فیصلے کے خلاف ان کا مقدمہ ابھی تک لاہور کی عدالت میں زیر سماعت ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ یونیورسٹی گرانٹ کمیشن نے پنجاب یونیورسٹی کے اس خط پر فیصلہ کر لیا ہے کہ اس سند کا ریکارڈ ان کے پاس نہیں ہے۔

سید عاقل شاہ کی ڈگری اگر جعلی ثابت ہو جاتی ہے تو انہیں زیادہ سے زیادہ تین سال تک قید کی سزا ہو سکتی ہے۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔