’حکومت کے مستقبل کا فیصلہ کرنا اسمبلیوں کا کام ہے‘

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 2 نومبر 2012 ,‭ 16:45 GMT 21:45 PST

پاکستان کے وزیرِ اطلاعات قمر زمان کائرہ نے کہا ہے کہ عدالتیں اس بات کا فیصلہ نہیں کر سکتیں کہ کونسی حکومت کامیاب ہے اور کونسی ناکام، یہ فیصلہ کرنا عوام کا کام ہے۔

انہوں نے کہا کہ عدالتیں اس بات کا فیصلہ کر سکتی ہیں کہ حکومت کا کون سا ایکٹ قانون کے مطابق یا قانون کے خلاف ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کی حیثیت کا فیصلہ اسمبلیاں کرتی ہیں عدالتیں نہیں۔

جمعہ کو بی بی سی کو دیے گئے ایک انٹرویو میں قمر زمان کائرہ کا کہنا تھا کہ ان کے خیال میں سیاسی حکومتوں کے مستقبل کا فیصلہ کرنا صرف اور صرف اسمبلیوں کا کام ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر یہ کہا جائے کہ سیاسی عمل کا فیصلہ عدالتیں کریں گی کہ کس شخص کو وزیرِ اعظم یا وزیرِ اعلیٰ بنانے کا اختیار تو صرف اسمبلیوں اور پارلیمان کے پاس ہے اور اس کے علاوہ کوئی فورم نہیں ہے۔

"فیڈریشن چار بھائیوں کی شراکت داری ہے، اگر چاروں بھائی ایک دوسرے کا خیال کریں گے اور جو فیڈریشن ہے جو ایک باپ کے کردار میں ہے اس نے بھی ان سب کے ساتھ مساویانہ سلوک نہیں کیا تو ان کے جتنے حقوق بنتے ہیں اگر ان کا خیال رکھی گی اور ان کے اختیارات اور ان کے وسائل کو ساتھ لیکر چلے گی، ان کے ساتھ انصاف کرے گی تو اس صورت میں یہ ایک مضبوط وفاق ہو گا۔"

قمر زمان کائرہ

ایک سوال کے جواب میں کہ پارلیمان بلوچستان کے حالات کیوں ٹھیک نہیں کر پا رہی ان کا کہنا تھا کہ بلوچستان کا مسئلہ بہت زیادہ الجھا ہوا ہے۔ ان کا کہنا کہ تھا کہ اگر ایک شخص کے پاس تمام اختیارات آ جائیں، کسی صوبے کے اپنے وسائل پر حق نہ ہو، ان کو مالی اور سیاسی اختیارات نہ دیے جائیں تو پھر یہ تلخیاں آہستہ آہستہ بڑھتی جاتی ہیں۔

وزیرِ اطلاعات کےمطابق بلوچستان اس وقت مرکز سے ان روئیوں کی بدولت جو ماضی میں اس کے ساتھ روا رکھے گئیں شاقی ہے اور پھر بعض لوگوں نے اسے ہوا بھی دی، اس میں بیرونی ہاتھ بھی ہیں، اس میں ایسے افراد بھی شامل ہیں جن کے اپنے مفادات وابستہ ہیں اور چند افراد غصے میں بھی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ موجود حکومت نے بلوچستان کے لیے ایک سو دس ارب روپے مختص کیے ہیں جس کی وجہ سے اب وہاں تلخ میں کمی ہو رہی ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔