’یوٹیوب چوبیس گھنٹوں میں کھول دی جائے گی‘

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 28 دسمبر 2012 ,‭ 18:06 GMT 23:06 PST

وزیر داخلہ رحمان ملک اس بارے میں پہلے بھی ٹویٹ کر چکے ہیں مگر یوٹیوب تک رسائی تاحال پاکستان میں ممکن نہیں ہے۔

پاکستان کے وزیر داخلہ رحمان ملک نے ٹوئٹر پر ایک پیغام میں دعویٰ کیا ہے کہ پاکستان میں سماجی رابطے کی ویب سائٹ یو ٹیوب تک رسائی پر بندش آئندہ چوبیس گھنٹوں میں ختم ہو جائےگی۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ انہوں نے پی ٹی اے کے ساتھ ایک اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کی ہے اور’اچھی خبر یہ ہے کہ یو ٹیوب چوبیس گھنٹوں میں کھول دی جائے گی۔‘

انہوں نے مزید کہا کہ کہ اس ضمن میں حکم نامے کی امید یعنی جمعہ کو ہی رکھیں۔

پاکستان میں یوٹیوب کو رواں برس اٹھارہ ستمبر کو اس وقت بند کر دیا گیا تھا جب ملک میں پیغمبر اسلام کے خلاف بننے والی توہین آمیز فلم کےخلاف مظاہروں کا سلسلہ جاری تھا۔

بی بی سی کے رابطہ کرنے پر پی ٹی اے کے ایک اعلیٰ اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ یوٹیوب کی بندش کے حوالے سے ایک اجلاس تو ہوا ہے تاہم اسے کھولنے کا فیصلہ صرف وزیر اعظم کے حکم پر ہی ہو سکتا ہے۔

پی ٹی اے اور وزیر اعظم کے دفتر دونوں کا کہنا ہے کہ اس بارے میں حتمی بات صرف اور صرف وزیر اعظم ہی کر سکتے ہیں۔

اہلکار نے کہا کہ یوٹیوب تک رسائی کی بندش وزیر اعظم کے حکم پر ہوئی تھی اور ان کے حکم سے ہی اب اس کو کھولا جائے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ’قوانین کے تحت پی ٹی اے کو وزارت آئی ٹی اور ٹیلی کام ہی حکم دے سکتی ہے نہ کہ وزارت داخلہ۔‘

اس سلسلے میں وزیر اعظم کے دفتر سے بات کرنے پر بتایا گیا کہ ان کے علم میں ایسی کوئی بات نہیں ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔