میرانشاہ: پہاڑی نالے سے نو ’طالبان‘ کی لاشیں برآمد

آخری وقت اشاعت:  پير 31 دسمبر 2012 ,‭ 08:10 GMT 13:10 PST

پاکستان کے قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں حکام کا کہنا ہے کہ ایک پہاڑی نالے سے نو افراد کی لاشیں ملی ہیں جن کا تعلق کالعدم شدت پسند تنظیم تحریکِ طالبان پاکستان سے بتایا جاتا ہے۔

شمالی وزیرستان کے صدر مقام میرانشاہ میں مقامی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ ان نو افراد گولیاں مار کر ہلاک کیا گیا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ یہ لاشیں میرانشاہ بازار سے پندرہ کلومیٹر مشرق میں ایک پہاڑی نالے سے ملی ہیں۔

مقامی انتظامیہ کے مطابق ان افراد کو پیر کو ہی ہلاک کیا گیا ہے تاہم اہلکاروں کا کہنا ہے کہ یہ نہیں معلوم کہ انہیں کب اور کس نے اغوا کیا تھا۔

انتظامیہ کے مطابق یہ لاشیں طالبان شدت پسندوں کی ہیں جبکہ مقامی آبادی کا کہنا ہے کہ ان افراد کو شدت پسندوں کے خلاف کارروائیوں کے دوران اغوا کیا گیا تھا۔

تاحال پاکستانی طالبان کی جانب سے ہلاک شدگان کے طالبان ہونے یا نہ ہونے بارے میں کوئی بیان سامنے نہیں آیا ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں تو شدت پسندوں کی لاشیں ملتی رہتی ہیں لیکن یہ پہلی بار ہے کہ شمالی وزیرستان سے کالعدم تنظیم تحریکِ طالبان پاکستان سے تعلق رکھنے والے شدت پسندوں کی لاشیں ملی ہیں۔

قبائلی علاقے شمالی اور جنوبی وزیرستان سے ان افراد کی تو لاشیں ملتی ہیں جنہیں طالبان جاسوسی کے شک میں ہلاک کرتے ہیں۔

اس کے علاوہ طالبان کی جانب سے سکیورٹی اہلکاروں کے اغوا کے بعد انہیں ہلاک کر کے لاشیں پھینکنے کے واقعات بھی پیش آتے رہے ہیں۔

اتوار کو بھی پشاور کے نزدیک ماشو خیل میں ایک چیک پوائنٹ سے اغوا کیے جانے والے اکیس نیم فوجی اہلکاروں کی لاشیں نیم قبائلی علاقے حسن خیل سےملی تھیں۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔