’مصر سے ملنے والے وائرس کا تعلق پاکستان سے‘

آخری وقت اشاعت:  منگل 22 جنوری 2013 ,‭ 23:28 GMT 04:28 PST

پاکستان کا شمار دنیا کے ان تین ممالک میں ہوتا ہے جہاں پولیو کا وائرس پایا جاتا ہے

مصر کے دارالحکومت قاہرہ میں پولیو وائرس کی ایک ایسی قسم ملی ہے جو اس سے پہلے پاکستان کے شہر سکھر سے دریافت ہونے والے وائرس سے مماثلت رکھتی ہے۔

پولیو وائرس کی نشاندہی کے بعد اقوام متحدہ کے اداروں نے حکومتِ پاکستان سے کہا ہے کہ وہ ہوائی اڈروں پر بیرون ملک جانے والے بچوں کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے کے فوری انتظامات کرے۔

اس کے بعد حکومتِ پاکستان نے صوبائی حکومتوں اور وفاقی انتظامیہ کو ہدایت کی ہے کہ ملک کے تمام ہوائی اڈوں پر بیرون ملک جانے والوں بچوں کو پولیو وائرس سے بچاؤ کے حفاظتی قطرے پلانے کے انتظامات کیے جائیں۔

پاکستان کے سرکاری خبر رساں ادارے اے پی پی کے مطابق حکومت کی جانب سے جاری کردہ ہدایت نامے میں کہا گیا ہے کہ ہوائی اڈوں میں بیرون ملک روانگی کی انتظار گاہوں میں پانچ سال سے کم عمر بچوں کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے کے کاؤنٹر قائم کیے جائیں۔

اقوام متحدہ کے ادارے ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن، یونیسف اور محکمہ صحت کے اہلکاروں کی جانب سے جاری ہونے والے مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے کہ قاہرہ میں نکاسی آب کی نالیوں سے حاصل کردہ دو نمونوں میں وائرس کی وہ قسم پائی گئی ہے جو پاکستان کے صوبہ سندھ کے شہر سکھر سے دریافت ہوئی تھی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ’ پاکستان کی سرحدوں سے پولیو وائرس کو باہر پھیلنے سے روکنے کے لیے حکومت کے پولیو سے بچاؤ کے سیل کو ہدایت کی جاتی ہے کہ وہ تمام ہوائی اڈوں پر بیرون ملک روانگی کی انتظار گاہوں میں پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے کے کاؤنٹر قائم کرے‘۔

مصر کو سال دو ہزار چار میں پولیو وائرس سے محفوظ ملک قرار دے دیا گیا تھا تاہم اب ہدایت کی گئی ہے کہ قاہرہ کے ان علاقوں میں فوری طور پر بچوں کو پولیو کے قطرے پلائے جائیں جہاں سے وائرس ملا ہے‘۔

پاکستان میں گزشتہ سال پولیو مہم کے دوران کارکنوں، رضاکاروں پر مسلح حملے ہوئے

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق اقوام متحدہ کے ادارے ڈبلیو ایچ او اور یونیسف میں پولیو سیل کے قائم مقام سربراہ مائیکل کولمین نے ایک بیان میں کہا ہے کہ’ اس واقعہ سے ظاہر ہوتا ہے کہ پاکستان میں پولیو کے قطرے پلانے کی کتنی اہمیت ہے‘۔

’یہ اس بات کو تقویت دیتا ہے کہ پاکستان بھر میں طبی دیکھ بھال کے عملے کو فوری طور پر ملک میں پانچ سال سے کم عمر بچوں کو قریبی طبی مراکز میں اور گھر گھر جا کر پولیو کے قطرے پلانے والے رضاکاروں کے ذریعے قطرے پلائے جائیں‘۔

پاکستان میں پولیو کے خاتمے کے لیے وزیراعظم کی معاون خصوصی بیگم شہناز وزیر علی کے مطابق’ یہ ملک میں متحرک پولیو وائرس سے منسلک خطرات کی ایک سخت یاد دہانی ہے‘۔

دو ہزار گیارہ میں دنیا میں پولیو کے سب سے زیادہ ایک سو اٹھانوے کیسز پاکستان میں پائے گئے تھے جبکہ پچھلے سال پاکستان بھر میں پولیو کے 56 کیسز سامنے آئے تھے۔

پچھلے سال چار قومی اور چار علاقائی مہمات چلائی گئیں، جن کے علاوہ چھوٹے پیمانے پر آگاہی کی سرگرمیاں بھی جاری رہیں۔

پاکستان بھر میں پچھلے سال پولیو کے قطرے پلانے والے کارکنان پر کئی بار حملہ کیا گیا جس میں متعدد کارکنان ہلاک ہوئے تھے۔

ان حملوں کے بعد اقوامِ متحدہ نے پاکستان میں جاری پولیو مہم میں شریک اپنے عملے کو واپس بلا لیا ہے اور یونیسف اور عالمی ادارۂ صحت کے فیلڈ سٹاف کو مزید احکامات تک پولیو مہم میں شرکت سے روک دیا گیا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔