کوئٹہ: کان میں گیس بھرنے سے آٹھ ہلاک

آخری وقت اشاعت:  پير 28 جنوری 2013 ,‭ 09:53 GMT 14:53 PST

بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ کے ضلع لورالائی کے علاقے دکی میں کوئلے کی کان میں گیس بھر جانے سے آٹھ کان کن ہلاک اور دو بے ہوش ہو گئے۔

یہ حادثہ اس وقت پیش آیا جب دکی کی ایک نجی کان میں دس کان کن پیر کی صبح چھ بجے داخل ہوئے اور وہاں زہریلی گیس کی موجودگی کے باعث بے ہوش ہوئے۔

چیف انسپیکٹر مائنز بلوچستان افتخار احمد نے بی بی سی کے رابطہ کر نے پر اس واقعہ کی تصدیق کی۔

ان کا کہنا تھا کہ ہلاک ہونے افراد کی لاشوں اور بے ہوش کان کنوں کو کان سے نکال لیا گیا۔

چیف انسپیکٹر مائنز نے کہا کہ اس واقعہ کے بارے میں تحقیقات کا حکم دیا گیا ہے لیکن ابتدائی تحقیقات کے مطابق یہ واقعہ میتھین گیس بھر جانے کی وجہ سے پیش آیا۔

نیشنل لیبر مائنز یونین کے صدر بخت نواب نے بتایا کہ ہلاک اور بے ہوش ہونے والے کان کنوں کا تعلق خیبر پشتونخوا کے علاقے شانگلہ اور سوات سے ہے۔

بلوچستان میں دیگر صنعتیں نہ ہونے کی وجہ سے کانکنی سب سے بڑی صنعت ہے۔

ان کانوں میں ساٹھ ہزار سے زائد افراد کام کرتے ہیں لیکن مناسب حفاظتی انتظامات نہ ہونے کی وجہ سے ان میں اس طرح کے واقعات ایک معمول بن گئے ہیں۔

واضح رہے کہ مارچ سنہ دو ہزار گیارہ میں کوئٹہ کے قریب ایک کان میں گیس بھرجانے اور دھماکے کے باعث تینتالیس کان کن ہلاک ہو گئے تھے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔