حیدر آباد: وزیرِ تعلیم کے بیان پر ہڑتال

آخری وقت اشاعت:  اتوار 24 فروری 2013 ,‭ 11:20 GMT 16:20 PST
پیر مظہرالحق

پیر مظہرالحق صوبائی وزیر تعلیم ہیں

حیدرآباد اور سندھ کے بعض ديگر شہروں میں حیدرآباد میں یونیورسٹی کے قیام کے حوالے سے صوبائی وزیر تعلیم کے بیان کے خلاف ہڑتال جاری ہے۔

واضح رہے کہ متحدہ قومی موومنٹ نے سندھ کے وزیر تعلیم کے حیدرآباد میں یونیورسٹی کے قیام کے حوالے سے دیے گئے بیان کے خلاف یوم سیاہ منانے کی اپیل کی تھی۔

صبح سویرے ہی متحدہ قومی موومنٹ کے کارکنوں نے سڑکوں پر رکاوٹیں کھڑی کیں اور ٹائر جلائے جس کے باعث اکثر چھوٹے بڑے تجارتی و کاروباری مراکز ، پیٹرول پمپ اور سی این جی اسٹےشن بند ہو گئے ۔

حیدرآباد سے کراچی اور اندرون سندھ چلنے والی پبلک ٹراسپورٹ بھی معمول سے انتہائی کم ہے۔

وزیر تعلیم کے بیان کے خلاف متحدہ قومی موومنٹ کی جانب سے شہر کی اہم شاہراہوں اور چوراہوں پر بینرز آویزاں کیے گئے ہیں۔

صوبائی وزیر تعلیم پیر مظہر الحق نے گزشتہ روز سندھ یونیورسٹی کے کانووکیشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ سندھ یونیورسٹی کو تباہ کرنے کی سازش کے پیش نظر حیدرآباد میں یونیورسٹی بننے نہیں دیں گے اور حیدرآباد میں یونیورسٹی کے قیام کے لیے کی جانے والی کوششوں کے خلاف وہ آہنی دیوار ہیں۔

انہوں نے ڈگری لینے کے لیے آئے ہوئے یونیورسٹی سے فارغ التحصیل نوجوانوں سے کہا تھا کہ انہیں علم ہے کہ کس طرح حیدرآباد میں یونیورسٹی قائم کرنے کی سازش کی جارہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ کراچی میں گورنر ہاؤس میں سابق فوجی حضرات کس طرح سندھ یونی ورسٹی کو نقصان پہنچانے کی سازشوں میں مصروف تھے۔

پیر مظہرالحق اور اجہ پرویز

یونیورسٹی کا متنازعہ اس ملاقات سے شروع ہوا تھا

صوبائی وزیر تعلیم پیر مظہر الحق کے جس بیان پر حیدرآباد اور سندھ کے دیگر شہروں میں جو شدید در عمل سامنے آیا ہے اس کی ابتداء وزیراعظم راجہ پرویز اشرف کی گورنمنٹ کالج، کالی موری میں موجودگی کے دوران پیش آئی۔

وزیر اعظم نے یونیورسٹی کا دورہ کرتے ہوئے کالج کی امداد کے لیے پچاس کروڑ روپے کا اعلان کیا تو حاضرین نے کالج کو یونیورسٹی کا درجہ دینے کا مطالبہ کیا۔

شور کے باعث وزیر اعظم لوگوں کا مطالبہ سمجھ نہ سکے تو انہوں نے پرنسپل سے معلوم کیا کہ لوگ کیا کہہ رہے ہیں۔ کالج کے پرنسپل نے کہا کہ لوگ کہہ رہے ہیں کہ یونیورسٹی کے قیام کا اعلان فرما دیجیے۔

اسی دوران پیر مظہر الحق وزیراعظم کے قریب آئے تو وزیر اعظم نے پوچھا کہ یونیورسٹی جواب میں پیر مظہر الحق نے وزیر اعظم کے کان میں کہا کہ یونیورسٹی نہیں بننی چاہیے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔