نیشنل کاؤنٹر ٹیررازم اتھارٹی بِل منظور

آخری وقت اشاعت:  بدھ 13 مارچ 2013 ,‭ 15:09 GMT 20:09 PST

پاکستان کے ایوانِ بالا یعنی سینیٹ نے نیشنل کاؤنٹر ٹیررازم اتھارٹی (این سی ٹی اے) کا بِل پاس کر دیا ہے۔

اس بِل کی منظوری بدھ کی شام ہونے والے سینیٹ کے اجلاس میں دی گئی۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق اس بِل کی منظوری کے ساتھ ہی پاکستان میں نیشنل کاؤنٹر ٹیررازم اتھارٹی کے قیام عمل میں آ گیا۔

خیال رہے کہ پاکستان کا ایوانِ زیریں یعنی قومی اسمبلی پہلے ہی اس بِل کی منظوری دے چکی ہے۔

پاکستان کے وفاقی وزیرِ قانون فاروق ایچ نائیک نے سینیٹ میں اس بِل کو پیش کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم اس اتھارٹی کے چیئر مین ہوں گے۔

اس سے پہلے حکمران جماعت پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما رضا ربانی نے اس بِل کی چند شقوں پر اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ اس بِل میں کسی بھی اہم پالیسی کی منظوری کے لیے تمام ارکان کی شرکت لازمی ہو گی۔

ان کا کہنا تھا کہ نیشنل کاؤنٹر ٹیررازم اتھارٹی کی منظوری کا بنیادی مقصد قومی اور صوبائی اداروں میں انٹیلیجنس کی معلومات کے تبادلے کو مزید بہتر بنانا ہے۔

پاکستان کے ایوانِ بالا یعنی سینیٹ نے انتخابی قوانین سے متعلق ترمیمی بل سنہ دو ہزار تیرہ کی بھی متفقہ طور پر منظوری دی۔

اس ترمیمی بِل کے تحت عوامی نمایندگی ایکٹ انیس سو چھہتر میں ترمیم کی جا سکے گی۔

یہ ترمیمی بل سینیٹ میں حزب مخالف کے رہنما اسحاق ڈار نے پیش کیا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔