نئی حلقہ بندیاں، ایم کیو ایم کا اظہارِ عدم اعتماد

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 23 مارچ 2013 ,‭ 13:17 GMT 18:17 PST

’صرف کراچی کے حلقوں میں تبدیلیاں ایم کیو ایم کا ووٹ بینک تقسیم کرنے کی سازش ہے‘

پاکستان کے الیکشن کمیشن نے صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی کے گیارہ حلقوں کی نئی حد بندی کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا ہے۔

الیکشن کمیشن کے نوٹیفکیشن کے مطابق کراچی میں قومی اسمبلی کے تین اور صوبائی اسمبلی کے آٹھ حلقوں کی حد بندیاں کی جائیں گی۔

دوسری جانب متحدہ قومی موومنٹ نے کراچی کے گیارہ حلقوں کی نئی حد بندی کرنے پر الیکشن کمیشن پر عدم اعتماد کا اظہار کیا ہے۔

قومی اسمبلی کے جن حلقوں کی حد بندیاں کی جائیں گی ان میں این اے 239، این اے 250 اور این اے 254 شامل ہیں۔

سال 2008 کے عام انتخابات میں این اے 239 سے پیپلز پارٹی کے امیدوار نے کامیابی حاصل کی تھی جبکہ این اے 250 اور 254 سے ایم کیو ایم کے امیدوار کامیاب ہوئے تھے۔

صوبائی اسمبلی کے آٹھ حلقوں میں پی ایس 89، پی ایس 112، پی ایس 113، پی ایس 114، پی ایس 115، پی ایس 116، پی ایس 118 اور پی ایس 124 شامل ہیں۔

ان حلقوں میں پی ایس 89 کے علاوہ بقیہ سات سیٹوں سے متحدہ قومی موومنٹ کامیاب رہی تھی۔ پی ایس 89 سے پیپلز پارٹی نے کامیابی حاصل کی تھی۔

دوسری جانب ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین نے کراچی کے گیارہ حلقوں کی نئی حد بندی کرنے پر الیکشن کمیشن پر عدم اعتماد کا اظہار کیا ہے۔

انہوں نے ایم کیو ایم کی رابطہ کمیٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ صرف کراچی کے حلقوں میں تبدیلیاں ایم کیو ایم کا ووٹ بینک تقسیم کرنے کی سازش ہے۔

الطاف حسین نے واضح کیا کہ ایم کیو ایم کے کارکنان اور حمایتی اپنے حق پر ڈاکہ ڈالنے کی سازش کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔

دوسری جانب سندھ اسمبلی کے سابق رکن فیصل سبزواری نے بھی میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پہلے الیکشن کمیشن نے کہا کہ مردم شماری کے بغیر حلقہ بندیاں نہیں ہوسکتیں لیکن پھر راتوں رات کسی کے کہنے پر اچانک حلقہ بندیاں کر دی گئیں۔

انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم نے الیکشن کمیشن کے ہر جائز فیصلے کا خیر مقدم کیا ہے اور الیکشن کمیشن کو سیاست کا اکھاڑہ نہیں بننا چاہیے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔