سردار اختر مینگل کی پاکستان واپسی

آخری وقت اشاعت:  منگل 26 مارچ 2013 ,‭ 21:41 GMT 02:41 PST

بلوچستان نیشنل پارٹی (مینگل) کے سربراہ سردار اختر مینگل پیر کو اپنی خودساختہ جلا وطنی ختم کر کے کراچی پہنچ گئے۔

ان کے کراچی پہنچنے کے ساتھ ہی ان کے آبائی علاقے خضدار میں نامعلوم افراد نے فائرنگ کرکے ان کی پارٹی کے ایک کار کن کو قتل کر دیا۔

سردار اخترمینگل کو سابق صدر جنرل پرویز مشرف کے دور میں گرفتار کیا گیا تھا اور پیپلز پارٹی کی سابق دور میں ان کی رہائی اس وقت عمل میں آئی تھی جب وہ جیل میں شدید علیل ہو نے کے باعث رہائی کے بعد علاج کی غرض سے بیرون ملک گئے تھے۔

وہ گزشتہ سال کے اختتام پر بلوچستان بد امنی کیس میں سپریم کورٹ میں پیش ہوئے تھے لیکن سپریم کورٹ میں یشی کے بعد وہ فوراً واپس دبئی چلے گئے تھے۔

مجموعی طور پر پونے چار سالہ جلا وطنی ختم کر کے وہ جب دبئی سے کراچی پہنچے تو ہوائی اڈے پر ان کی پارٹی کے کارکنوں نے ان کا استقبال کیا اور انہیں جلوس کی شکل میں ان کی رہائش گاہ لے جایا گیا۔

جس وقت سردار اختر مینگل کراچی پہنچے تو خضدار میں ان کے ایک پارٹی کارکن منصور مینگل کو نامعلوم افراد نے فائرنگ کر کے قتل کردیا۔

اس واقعہ سے دو روز قبل ان کے ہی پارٹی کے ایک اور کارکن کو خضدار میں فائرنگ کر کے ہلا ک کیا گیا تھا۔

بی بی سی سے فون پر بات چیت کرتے ہوئے سردار اختر مینگل نے تصدیق کی کہ جب وہ دبئی سے کراچی پہنچے تو اس وقت پارٹی کے ایک کارکن منصور مینگل کو خضدار میں فائرنگ کر کے ہلاک کر دیا گیا۔

انہوں نے کہا کہ ’یہ پیغام ہمیں جمہوری عمل سے دور رکھنے کے لئے دیا جارہا ہے‘۔

سردار اختر جان مینگل کا کہنا تھا کہ ’بلوچستان کی صورتحال میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے‘۔

ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ ’جہاں تک ہماری جماعت کا تعلق ہے وہ ایک جمہوری جماعت ہے اور ہم نے جمہوری طور پر بلوچستان کے حقوق کی آواز ہر فورم پر اٹھائی ہے‘۔

واضح رہی کہ بلوچستان نیشنل پارٹی نے دو ہزار آٹھ میں عام انتخابات کا بائیکاٹ کیا تھا۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔