نواز کے کاغذات نامزدگی چیلنج، نوٹس جاری

Image caption نواز شریف لاہور سے قومی اسمبلی کے حلقہ ایک سو بیس سے امیدوار ہیں

پاکستان پیپلز پارٹی نے مسلم لیگ نواز کے سربراہ اور سابق وزیر اعظم نواز شریف کے کاغذات نامزدگی کو چیلنج کردیا ہے اور اس ضمن میں ریٹرننگ آفیسر کے سامنے اعتراضات پر مبنی ایک درخواست دی گئی ہے۔

ریٹرننگ آفیسر نے پیپلز پارٹی کی درخواست پر نواز شریف کو پانچ اپریل کے لیے نوٹس جاری کر دیا ہے۔

مسلم لیگ نون کے سربراہ نواز شریف لاہور سے قومی اسمبلی کے حلقہ ایک سو بیس سے امیدوار ہیں اور ان کے کاغذات نامزدگی کو ان کے مدمقابل پیپلز پارٹی کے امیدوار سہیل ملک نے چیلنج کیا ہے۔

نواز شریف سولہ برس کے وقفے کے بعد عام انتخابات میں حصہ لے رہے ہیں۔ اکتوبر ننانوے میں اپنی حکومت ختم ہونے کے بعد سعودی عرب چلے گئے تھے اور دو ہزار دو میں ہونے والے انتخابات میں حصہ نہیں لے سکے۔

دو ہزار آٹھ کے انتخابات میں نواز شریف پاکستان واپس آگئے تھے تاہم انہوں نے عام انتخابات میں حصہ نہیں لیا تھا۔

ریٹرننگ آفیسر کے سامنے سہیل ملک کے وکیل میاں حنیف طاہر نے یہ اعتراضات اٹھائیں ہیں کہ نواز شریف صادق اور امین نہیں ہیں اس لیے وہ عام انتخابات میں حصہ لینے کے اہل نہیں۔

میاں حنیف طاہر ایڈووکیٹ نے ریٹرننگ آفیسر کو بتایا کہ اصغر خان کیس میں نواز شریف ان سیاست دانوں میں شامل ہیں جو نادہندہ ہیں اور انہوں نے اسلامی جمہوری اتحاد کے ذریعے لی گئی رقم واپس نہیں کی۔

پیپلز پارٹی کے رہنما سہیل ملک کی طرف سے یہ اعتراض اٹھایا گیا کہ نواز شریف سابق فوجی صدر جنرل پرویز مشرف کے ساتھ ایک معاہدہ کرکے سعودی عرب گئے تھے تاہم وہ عوام کے سامنے اس معاہدے کے بارے میں غلط بیانی کرتے رہے ہیں۔

میاں حنیف طاہر ایڈووکیٹ کے بقول نواز شریف سیاست میں دوہرہ معیار رکھتے ہیں کیونکہ ایک طرف سابق فوجی صدر جنرل پرویز مشرف کے خلاف غداری کا مقدمہ چلانے کی بات کرتے رہے ہیں لیکن اب جب جنرل مشرف پاکستان میں ہیں تو انہوں نے کارروائی تو دور کی بات ان کے خلاف کوئی بیان تک نہیں دیا۔

پیپلز پارٹی کے رہنما سہیل نے استدعا کی کہ ان کے مدمقابل امیدوار نواز شریف کو آئین کے آرٹیکل باسٹھ اور تریسٹھ پر پورا نہ اترنے پر نااہل قرار دے کر ان کے کاغذات مسترد کیے جائیں۔

اسی بارے میں