کرک: جھڑپ میں چھ افراد ہلاک

Image caption ضلع کرک وزیرستان سے قریب ہے جہاں خاصے عرصے سے شورش جاری ہے

صوبہ خیبر پختون خوا کے جنوبی ضلع کرک میں پولیس اور شدت پسندوں کے درمیان جھڑپ دو پولیس اہلکار اور چار شدت پسند ہلاک ہو گئے ہیں۔

اس واقعے میں دو پولیس اہلکار اور دو شدت پسند زخمی بھی ہوئے ہیں۔

پولیس کے مطابق انھیں اطلاع ملی کہ ڈیری اور بانڈہ داؤد شاہ کے درمیان علاقے میں شدت پسند چھپے ہوئے ہیں۔ پولیس نے جب ان کی تلاش میں چھاپا مارا تو شدت پسندوں نے فائرنگ شروع کر دی جس کے بعد دونوں طرف سے شدید جھڑپ شروع ہو گئی۔

شدت پسندوں کی فائرنگ سے اے ایس آئی مرشد خان اور سپاہی زاہد ہلاک، جب کہ سر محمد اور مصطفیٰ زخمی ہو گئے۔

پولیس کی جوابی کارروائی سے چار شدت پسند مارے گئے، جب کہ ایک شدت پسند زخمی ہو کر قریبی پہاڑوں میں روپوش ہو گیا۔

اس واقعے کے بعد پولیس کی بھاری نفری موقعے پر پہنچ گئی اور روپوش شدت پسند کی تلاش شروع کر دی۔ ایک اطلاع کے مطابق یہ زخمی شدت پسند بھی ہلاک ہو گیا ہے لیکن اس خبر کی تصدیق نہیں ہو سکی۔

یاد رہے کہ اسی علاقے میں ایک ماہ قبل گورنمنٹ ڈگری کالج میں ایک بم دھماکا ہوا تھا جس کے بعد پولیس شدت پسندوں کا سراغ لگانے کی کوشش کر رہی تھی۔

اسی بارے میں