انتخابی دفتر کے قریب دھماکہ، متعدد زخمی

Image caption متحدہ قومی موومنٹ نے دھماکے کی مزمت کی اور کہا کہ دھماکوں کے باوجود ان کی انتخابی مہم جاری رہے گی

پاکستان کے صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی میں برنس روڈ کے علاقے میں متحدہ قومی موومنٹ کے دفتر کے قریب بم دھماکے میں متعدد افراد زخمی ہوگئے ہیں۔

متحدہ قومی موومنٹ کے رہنما قمر منصور کا کہنا ہے کہ ان کے دفتر میں انتخابی سرگرمیاں جاری ہیں۔

برنس روڈ کا یہ علاقہ شہر کی فوڈ سٹریٹ ہے جہاں رات گئے تک لوگوں کا رش موجود ہوتا ہے۔ سیاسی طور پر متحدہ کا یہ سرگرم یونٹ ہے۔

دوسری جانب متحدہ قومی موومنٹ نے دھماکے کی مزمت کی اور کہا کہ دھماکوں کے باوجود ان کی انتخابی مہم جاری رہے گی۔

یاد رہے کہ کراچی میں ایم کیو ایم، عوامی نیشنل پارٹی اور پیپلز پارٹی بم دھماکوں کی زد میں ہے۔

ان حملوں کی ابتدا پیپلز کالونی سے ہوئی جہاں متحدہ قومی موومنٹ کے انتخابی دفتر کو نشانہ بنایا گیا۔ اس حملے میں تین افراد ہلاک ہوئے۔

اس کے بعد نصرت بھٹو کالونی میں ایم کیو ایم کے بند دفتر کے باہر دھماکہ ہوا جس میں چار افراد ہلاک ہوئے۔

جمعہ کو سائیٹ ایریا میں بسم اللہ کالونی میں رات کو عوامی نیشنل پارٹی کی کارنر میٹنگ میں حملہ کیا گیا جس میں گیارہ افراد زندگی گنوا بیٹھے۔ اس سے پہلے صبح کو عوامی نیشنل پارٹی کے امیدوار عبدالرحمان پر لانڈھی میں حملہ کیا گیا تھا۔

سنیچر کی شب تین دھماکہ ہوئے، جس میں دو ایم کیو ایم کے دفتر کے عقب میں اور ایک پیپلزپارٹی کے جلسے میں کیا گیا، دونوں دھماکوں میں تین افراد ہلاک ہوئے۔

چار روز کے وقف کے بعد ایک بار پھر انتخابی مہم کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

اسی بارے میں