علی گیلانی کی بازیابی کے لیے آپریشن جاری

Image caption علی حیدر گیلانی کو 9 مئی کو ملتان سے اغوا کیا گیا تھا

پاکستان کے سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے بیٹے علی حیدر گیلانی کی بازیابی کے لیے صوبہ خیبرپختونخوا کے تین اضلاع میں پولیس کا آپریشن جمعہ کو بھی جاری ہے۔

نوشہرہ کے ضلعی پولیس افسر نے بی بی سی اردو کو بتایا ہے کہ جمعرات کو کارروائی کے دوران حراست میں لیے جانے والے افراد سے ابتدائی تفتیش میں حاصل شدہ معلومات کی روشنی میں اب نوشہرہ، چارسدہ اور مردان میں چھاپے مارے جا رہے ہیں۔

پاکستان کے مقامی میڈیا کے مطابق ان کارروائیوں کے دوران اغواکاروں کے سرغنہ کو چارسدہ سے گرفتار کیا گیا ہے تاہم اس بارے میں ڈی پی او نوشہرہ کا کہنا تھا کہ چونکہ کارروائی ابھی جاری ہے اس لیے وہ آپریشن سے متعلق تفصیل نہیں دے سکتے۔

یہ آپریشن نوشہرہ میں اکوڑہ خٹک کے علاقے مصری بانڈہ میں اہم مغوی کی موجودگی کی اطلاعات پر جمعرات کی صبح شروع ہوا تھا اور اس دوران متعدد مشتبہ افراد کو گرفتار اور پشاور سے تعلق رکھنے والے ایک مغوی عبدالوہاب کو بازیاب کرایا گیا۔

اسی مغوی نے پولیس کو بتایا تھا کہ علی حیدر گیلانی بھی اسی علاقے میں اغواکاروں کے قبضے میں موجود ہیں۔

اس انکشاف پر پولیس کی مزید نفری بھی منگوا لی گئی تھی اور علاقے میں کارروائی تیز کر دی گئی تھی تاہم تاحال علی حیدر گیلانی کا سراغ نہیں مل سکا ہے۔

واضح رہے کہ علی حیدر گیلانی کو ملک میں گیارہ مئی کو ہونے والے عام انتخابات سے دو دن پہلے ملتان سے اغوا کیا گیا تھا۔

علی حیدر گیلانی پاکستان کے سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے چھوٹے بیٹے ہیں اور انتخابات میں پنجاب اسمبلی کے حلقہ پی پی 200 سے پیپلز پارٹی کے امیدوار تھے۔

نو مئی کو فرخ ٹاؤن میں ان کے انتخابی جلسے پر فائرنگ کی گئی تھی جس سے ان کے سیکرٹری محی الدین اور ایک محافظ ہلاک ہوگئے تھے۔ حملہ آور بعدزاں علی حیدرگیلانی کو اغوا کر کے لے گئے تھے۔

اسی بارے میں