صدر زرداری اور نواز شریف کی ون آن ون ملاقات

Image caption ’ملک کو درپیش مسائل پر قابو پانے کے لیے ماضی کی تلخیوں کو بھلا کر آگے بڑھنا ہوگا‘

پاکستان کے صدر آصف علی زرداری اور انتخابات میں اکثریت حاصل کرنے والی جماعت پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سربراہ میاں نواز شریف نے ملک کو درپیش مسائل مل جل کر حل کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

نواز شریف نے بدھ کو ایوان صدر میں چینی وزیراعظم کے اعزاز میں صدر کی جانب سے دیے گئے ظہرانے میں شرکت کے بعد صدر سے ملاقات کی۔

صدارتی ترجمان سینیٹر فرحت اللہ بابر کے مطابق اس ملاقات میں صدر نے میاں نواز شریف کو حالیہ انتخاب میں کامیابی پر مبارکباد دی اور نئی حکومت کا خیر مقدم کرتے ہوئے اس کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔

ترجمان کے مطابق ملاقات میں صدر نے امید ظاہر کی کہ نئی حکومت ملک کو درپیش مسائل کا حل نکالے گی۔

ایوان صدر کے ترجمان فرحت اللہ بابر کے مطابق میاں نواز شریف اور صدر آصف علی زرداری کی ون آن ون ملاقات کے بعد اس میں ن لیگ کے رہنما سینیٹر اسحاق ڈار اور پرویز رشید بھی شریک ہوئے۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق ملاقات کے بعد میاں نواز شریف نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ بینظیر بھٹو کی جانب سے شروع کی گئی مفاہمتی پالیسی جاری رہے گی تاکہ مل کر ملک کو بحران سے نکالا جا سکے۔

ان کا کہنا تھا کہ ملک کو درپیش مسائل پر قابو پانے کے لیے ماضی کی تلخیوں کو بھلا کر آگے بڑھنا ہوگا اور یہ کہ سیاسی قیادت اور ریاست کے اداروں کے درمیان قریبی رابطہ بہت ضروری ہے۔

مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق نواز شریف کا یہ بھی کہنا تھا کہ آصف علی زرداری پاکستان کے منتخب جمہوری صدر ہیں اور وہ ان سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کیوں کریں۔

الیکشن سے پہلے ایک نجی ٹی وی کو دیے گئے انٹرویو میں میاں نواز شریف پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ وہ بطور وزیراعظم صدر آصف علی زرداری سے حلف لیں گے۔

اسی بارے میں