’چند دنوں میں بجلی کا بحران حل کرنے کی توقع نہ کریں‘

Image caption میاں محمد نواز شریف نے کہا کہ وہ بجلی کے بحران پر قابو پانے کے لیے نئے بجلی گھر بنائیں گے

پاکستان کے متوقع وزیرِاعظم میاں محمد نواز شریف کا کہنا ہے کہ نئی حکومت سے چند دن میں بجلی کے بحران پر قابو پانے کی توقع رکھنا درست نہیں ہے۔

لاہور میں مسلم لیگ ن کے صدر میاں نواز شریف نے جوہری دھماکوں کے پندرہویں سالگرہ کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جوہری طاقت بننے کے بعد صرف بلب جلانے کے لیے بھی مشکل سے بجلی ملنا باعثِ شرم ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق میاں نواز شریف نے کہا کہ وہ بجلی کے بحران پر قابو پانے کے لیے نئے بجلی گھر بنائیں گے لیکن انہوں نے خبردار کیا کہ اُن کے پاس اس مسئلے کا کوئی فوری حل موجود نہیں ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’یہ ایک المیہ ہے کہ پاکستان جوہری طاقت ہونے کے باوجود بجلی کا شدید بحران کا شکار ہے اور دن میں بیس گھنٹے کے لیے بجلی نہیں ہوتی تو ایسے حالات میں ملک کیسے ترقی کر سکتا ہے۔‘

لیکن انہوں نے خبردار کرتے ہوئے کہا کہ ’برائے مہربانی یہ توقع نہ کریں کہ ہم چند دنوں میں بجلی کے بحران کو حل کر دیں گے۔‘

میاں محمد نوازشریف نے کہا کہ ’ہم اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے اپنی پوری کوشش کریں گے اور تمام وسائل بروئے کار لائیں گے لیکن آپ کو تحمل کا مظاہرہ کرنا ہوگا۔‘

نواز شریف کا کہنا ہے کہ وہ فی الحال یہ نہیں بتا سکتے کے بجلی کا بحران حل ہونے میں کتنا وقت لے گا۔ انھوں نے کہا کہ پانی اور کوئلے سے بجلی کی پیداوار کے لیے نئے بجلی گھر لگائے جائیں گے اور بجلی کی پیداواری شعبے میں سرمایہ کاری کرنے والی بین الاقوامی کمپنیوں کو منافع ملک سے باہر لے جانے کی اجازت ہوگی۔

پاکستان میں بجلی کی پیداواری شعبے میں بدانتظامی، سرمایہ کاری کا فقدان اور بدعنوانی کی وجہ سے شدید گرمی میں بھی دن میں بیس گھنٹے تک بجلی دستیاب نہیں ہوتی ہے۔

پاکستان میں گیارہ مئی کو ہونے والے عام انتخابات میں ملک میں جاری بجلی کا بحران اور لوڈشیڈنگ ایک بڑا موضوع رہا۔

اسی بارے میں