پاکستانی سفارتکار کے ساتھ’مارپیٹ‘ پر احتجاج

بھارت کے دارالحکومت دہلی میں پاکستانی سفارتخانے نے سڑک کے ایک حادثے میں اپنے ایک سفارتکار کے ساتھ مبینہ’ مارپیٹ’ کے واقعہ کے بعد بھارتی وزارتِ خارجہ سے سخت احتجاج کیا ہے۔

پاکستان نے بھارت سے اپنے سفارتی عملے کے لیے بہتر حفاظی انتظامات کا مطالبہ کیا ہے۔

ہائی کمیشن کے ایک ترجمان نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ واقعہ پیر کی شام پیش آیا جب فرسٹ سیکرٹری (تجارت) زرغام رضا گھر لوٹ رہے تھے کہ ان کی گاڑی ایک موٹر سائیکل سے ٹکرا گئی۔

انہوں نے بتایا کہ ہائی کمیشن نے بھارتی وزارت خارجہ کو خط لکھ کر اس واقعہ پر سخت احتجاج کیا ہے۔

لیکن خبر رساں اداروں کے مطابق بھارتی اہلکاروں نے اس بات سے انکار کیا ہے کہ سفارت کار کے ساتھ مارپیٹ کی گئی تھی۔

باضابطہ طور پر پولیس کی جانب سے ابھی کوئی بیان جاری نہیں کیا گیا ہے۔ لیکن پولیس کے ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے خبر رساں اداروں کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ اس وقت پیش آیا جب زرغام رضا کی گاڑی ایک موٹرسائیکل سے ٹکرائی اور اس کے بعد دونوں میں تلخ کلامی ہوگئی لیکن نوبت مارپیٹ تک نہیں پہنچی۔

اس واقعے کے بعد میں پولیس فریقین کو تھانے لے گئی۔

ہائی کمیشن کے ترجمان کے مطابق’ایسا لگتا ہے کہ ایک موٹرسائکل زرغام رضا کی گاڑی کا تعاقب کر رہی تھی اور پھر دانستہ طور پر سامنے آ گئی جس سے گاڑی اور موٹر سائیکل میں ٹکر ہوگئی۔۔۔پھر آٹھ دس لوگ آئے اور انہوں نے ڈرائیور اور زرغام رضا کے ساتھ مارپیٹ کی۔‘

اسی بارے میں