سوات سمر فیسٹول، سیاحوں کی آمد

Image caption ہم سال بھر اس سیزن کا انتظار کرتے ہیں: مقامی دوکاندار

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا میں ضلع سوات کے خوبصورت ترین علاقے وادی کالام میں صوبائی حکومت اور پاکستان آرمی کے باہمی اشتراک سے سیا حت کے فروغ اور سیا حوں کی دوبارہ آمد و حوصلہ آفزائی کے لیے چار روزہ سمر فیسٹول کا انعقاد کیا گیا ہے۔

اس میلے کا انعقاد 20 سے 23 جون تک کیا جا رہا ہے۔اس فیسٹول میں پیراگلائیڈنگ ، گھڑ سواری ، نیزہ بازی ، کشتی رانی اور دیگر مقابل شامل ہیں۔

مقامی صحافی انور شاہ کے مطابق کالام میں ہونے والے اس فیسٹول کا باقاعدہ افتتاح گورنر خیبر پختونخواہ شوکت اللہ نے کیا اس نے اپنے مختصر خطاب میں کہا کہ کالام میلے کا انعقاد اس بات کا ثبوت ہے کہ یہاں اب معمول کی زندگی بحال ہو گئی ہے۔

کالام کے اس سمر فیسٹول میں لاہور سے انے والی ایک خاتون سیاح مس نسیم نے بتایا کہ وہ پہلی مرتبہ سوات ائیں ہیں اور انہیں سوات پسند آیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سوات آنے سے پہلے ان کے ذہن میں امن و امان کے حوالے سے کافی خدشات تھے لیکن آنے کے بعد انہیں معلوم ہوا کہ یہاں مکمل امن ہے۔

اسلام اباد سے ائے ہوئے ملٹی ایڈونچر کلب سے تعلق رکھنے والے ایک خاتون سیاح جہاں ایک طرف کالام پہنچنے پر انتہائی خوش تھے تو دوسری طرف وہ کالام روڈ کی خستہ حالی پر کافی پریشان بھی دکھائی دے رہی تھی۔

اس میلے کی راتوں کو رنگین بنانے کے لیے ہر رات مقامی اور غیر مقامی فنکار اپنے فن کا مظاہرہ کر تے ہیں جسکو دیکھنے کے لیے سیاحوں کی بڑی تعداد رات گئے تک موجود رہتی ہے اور نوجوان ساز پر بھنگڑے بھی ڈالتے ہیں جس سے سیاح لطف اندوز ہوتے ہیں۔

اس میلے کے انعقاد کے حوالے سے کالام کے ایک دوکاندار نے بتایا کہ کالام میں صرف گرمی کے سیزن میں تین چار ماہ ان کاروبار چلتا ہے باقی سردیوں کے اغاز سے ہی یہاں کاروبار ختم ہوجاتا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ وہ سال بھر اس سیزن کا انتظار کرتے ہیں۔

مینگورہ شہر سے تعلق رکھنے والے ایک دوکاندار نادر شاہ نے بی بی سی کو بتایا کہ سوات کی معیشیت کا دارو مدار سیا حت پر ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ جتنے ذیادہ تعداد میں سیاح آئیں نگے اتنی ہی ان کا روزگار اچھا ہوگا اور یہاں کے لوگوں کی معاشی حالت بہتر ہوگی۔

سوات کے علاقے مٹہ سے تعلق رکھنے والے ایک شخص ناصر خان نے بتایا کہ امن کی بحالی پر وہ انتہائی خوش ہے۔ انہوں نے کہا کہ جب طالبان نے اپنی عملداری کے قیام کے بعد گانے سننے پر پابندی لگائی تھی تب وہ رات کو اپنے گھر میں چپکے سے موبائل کے ذریعے گانے سنتے تھے مگر آج بغیر کسی خوف کے وہ کالام میں مقامی اور غیر مقامی گلوکاروں اور فنکاروں کے گیت سن رہے ہیں۔

اس موقعے پر کالام میں گارمنٹس، ہینڈی کرافٹس اور دیگر مصنوعات کے سٹال بھی لگائے گئے ہیں جو سیاحوں کے خصوصی دلچسپی کا مرکز نے ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں