پشاور: سکیورٹی فورسز کے قافلے پر حملہ، سترہ افراد ہلاک

Image caption بڈھ بیر کے تھانے کے قریب دھماکہ اُس وقت ہوا جب سکیورٹی فورسز کا قافلہ وہاں سے گزر رہا تھا

پاکستان کے صوبہ خیبر پختوانخوا کے دارالحکومت پشاور کے حکام کا کہنا ہے کہ مضافاتی علاقے بڈھ بیر میں سکیورٹی فورسز کے ایک قافلے کے قریب دھماکے کے نتیجے میں سترہ افراد ہلاک جبکہ پچیس سے زیادہ افراد زخمی ہوئے ہیں۔

ہلاک ہونے میں ایک خاتون بھی شامل ہیں۔

دھماکے میں زخمی ہونے والے افراد کو طبی امداد کے لیے لیڈی ریڈنگ ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔

پشاور کے ڈپٹی کمشنر جاوید مروت نے بتایا کہ دھماکے میں پندرہ افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ زخمی ہونے والے افراد میں سے تقریباً پانچ کی حالت تشویشناک ہے۔

پشاور سے بی بی سی کے نامہ نگار عزیز اللہ کے مطابق دھماکہ بڈھ بیر کے تھانے کے قریب اُس وقت ہوا جب سکیورٹی فورسز کا قافلہ وہاں سے گزر رہا تھا۔

Image caption پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکے میں چالیس کلو زائد بارودی مواد استعمال کیا گیا ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکے میں سکیورٹی اہلکاروں کے قافلے کو نشانہ بنایا گیا۔

دھماکے کے بعد قانون نافذ کرنے والے ادارے کے اہلکاروں نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے اور علاقے کی تلاشی جاری ہے۔

عینی شاہد کا کہنا ہے کہ جیسے ہی سکیورٹی فورسز کا قافلہ بڈھ بیر تھانے کے قریب واقع مارکیٹ سے گزرا ویسے ہی دھماکہ ہو گیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکے کی نوعیت معلوم کی جا رہی ہے لیکن انتدائی تحقیقات کے مطابق دھماکہ خیز مواد گاڑی میں نصب تھا جیسے ریموٹ کنٹرول کے ذریعے اُڑا دیا گیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکے میں چالیس کلو بارودی مواد استعمال کیا گیا ہے۔

دھماکہ اتنا شدید تھا کہ اُس سے اردگرد کی عمارتوں کو نقصان پہنچا اور درجن سے زائد گاڑیاں بھی تباہ ہو گئی ہیں۔

ادھر وزیراعظم نواز شریف اور صدرآصف زرداری نے دھماکے کی مذمت کی ہے اور زخمیوں کو ہر ممکن مدد کرنے کے احکامات جاری کیے ہیں۔

اسی بارے میں